تشدد اورجھلس کر جاں بحق ہونیوالی نو بیاہتا دلہن کی قبر کشائی

تشدد اورجھلس کر جاں بحق ہونیوالی نو بیاہتا دلہن کی قبر کشائی

رائے ونڈ(نمائندہ پاکستان) رائے ونڈ کے نواحی گاؤں جودھو دھیر میں تشدد کے بعد آگ سے جلائی جانے والی نوبیاہتادلہن کی،علاقہ مجسٹریٹ ومقامی پولیس کی نگرانی میں قبر کشائی لیڈی ڈاکٹر نے متوفیہ کے نمونا جات لے کر دوبارہ دفن کردیا ،ورثا کی آہو پکار سیاسی وسماجی حلقوں نے ظلم کی انہتا قرار دیا ،ملزمان فرار۔تفصیلات کے مطابق تھانہ سٹی رائے ونڈ کے علاقہ موضع جودھو دھیرکے رہائشی محنت کش محمد اقبا ل نے اپنی بیٹی حافظ قرآن ثناء کی شادی 31جولائی2016کو وقاص ولد مشتاق ساکن جودھو دھیر سے کی تھی لڑکی کی والدہ ریحانہ اور اسکی بہن یاسمین نے بتایا کہ شادی کے چنددنوں بعد ہی سے لڑائی جھگڑ ے شروع ہوگئے 29ستمبر کو مبینہ طور پر خاوند وقاص اسکے والد مشتاق اور والدہ نے باہمی مشورہ سے بیوی ثناء کو تشدد کا نشانہ بنایا جس سے وہ موقع پر ہلاک ہوگئی بعدازاں گناہ چھپانے کے لیے پٹرو ل چھڑک کر آگ لگادی اور ڈرامہ رچاکر واویلہ کیا کہ کچن میں آگ لگنے سے ہلاک ہوئی اہل محلہ نے پولیس کی گاڑی منگوا کر نعش ٹھکانے لگانے کی کوشش ناکام بنادی یوسی صدر چوہدری یاسر اعجاز نے میڈیا کو بتایاکہ یہ ظلم کی انتہا ہے متوفیہ نہایت شریف النفس تھی غریب باپ نے اپنا فرض انتہائی دیانتداری سے نبھاتے ہوئے اپنی پانچ بیٹیوں یاسمین ،رخسانہ ،شکیلہ ،شبانہ اورمتوفی ثناء کی شادیاں محنت مزدوری کرکے کی تھیں مجرمو ں کو کیف کردار تک پہنچانے تک ہم چین سے نہیں بیٹھیں گے چوہدری منیر نے بتایا کہ اہل محلہ کے شور مچانے پر مقامی پولیس نے ملزم وقاص اوروالد مشتاق کو سات یوم تک اپنی تحویل میں رکھ کر بھاری رشوت کے عوض چھوڑ کر غریب محنت کش کی بیٹی سے نا انصافی کی ہے ملزم وقاص نے قبل ازیں کوٹ لکھپت میں بھی اپنی پہلی بیوی کو پلاٹ ہتھیانے کے لیے موت کے گھاٹ اتا ردیا تھا اہل محلہ کے پرزور اصرار پر ہی آج قبر کشائی تک نوبت پہنچی ہے اور انشاء اللہ متوفیہ کو جلد انصاف ملے گا متوفیہ کے لواحقین و اہل علاقہ سراپا احتجاج اور انصاف نہ ملنے پر وزیر اعظم فارم پر احتجاج کریں گے ۔

مزید : علاقائی