انویسٹرزطاہرالقادی کو دھرنے سے دور رکھنے کیلئے اہم کردار ادا کرینگے

انویسٹرزطاہرالقادی کو دھرنے سے دور رکھنے کیلئے اہم کردار ادا کرینگے

لا ہور (جاوید اقبا ل )پا کستا ن تحریک انصاف کے اسلا م آبا د دو نو مبر کو بند کر نے کے ا علان کے بعد ملک میں سیا سی درجہ حرا رت بلند مقام پر پہنچ گیا ہے ۔ جس کے بعد ملک بھر سمیت د نیا بھر میں بسنے والے پا کستا نیو ں کی نظرین 2نومبر کی طر ف لگ گئی ہیں ۔ اور اس سلسلہ میں ملک کے اندر ایک نئی بحث چھڑ گئی ہے جس میں مانئس ون کا فارمو لا ٹاک آف دا ٹاؤن بن گیا ہے ۔ گھر گھر اس فارمو لے پر گفتگو شروع ہو گئی ہے جس میں کہا جا ر ہا ہے کہ دو نو مبر کو حالا ت خرا ب ہو ئے تو ما ئنس ون کا فارمو لا سامنے لا یا جا ئے گا ۔ اس فا ر مو لے کے تحت موجودہ وزیر اعظم کو جانا بڑا تو ان کی جگہ حکومت اسحا ق ڈار کوسونپنے کا پرو گرا م ر کھتی ہے مگر اپوزیشن کو یہ نا م قابل قبول نہیں ہو گا ۔ تا ہم ذرا ئع کا کہنا ہے کہ ایسی صورت میں چو ہدر ی نثار علی خا ن وفاقی وزیرادا خلہ وزیر اعظم کے مضبوط ترین امیدوار ہوں گے ۔ ذرا ئع کا کہنا ہے کہ چو ہدر ی نثار ایک ایسا نا م ہے جو تحر یک انصاف سمیت د یگر اپوزیشن جما تو ں کوقبول ہو گا تا ہم یہ آپشن آخر ی ہو گا ۔ دوسری طر ف حکومت اور تحریک انصاف کا دونو مبر سے قبل ذیادہ سے ذیادہ سیاسی جما تو ں کوساتھ ملانے کے لئے جوڑتو ڑ بھی آخر ی مرحلے میں دا خل ہو چکا ہے مگر تا حا ل اس ضمن میں مسلم لیگ ن کا پلڑا بھا ر ی ہے ۔ تحریک انصاف تا حا ل نے سابق اتحا دیو ں مسلم لیگ (ق) عوا می مسلم لیگ کو ساتھ ملانے میں کا میا ب ہو سکی ہے ۔ تا ہم پی ٹی آئی پاکستا ن عوا می تحریک کے سربرا ہ علامہ طاہرالقادری کی سو فیصد حما یت حاصل کر نے میں کا میا ب نہیں ہو سکی ۔ پی ٹی آئی طا ہر القادر ی کے جو شیلے اور پکے کا ر کنو ں سے ہراوال دستے کا کا م لینا چا ہتی ہے ۔ مگر اس میں اسے دو نو مبر کے د ھر نے میں تا حا ل نا کا می کا سامنا ہے ذرا ئع کا کہنا ہے کہ طاہر القاری کو عمرا ن خا ن کے دھر نے سے دور ر کھنے کے لئے پی آے ٹی کے سر برا ہ کے بر طا نیہ اور کینڈا میں موجود انویسٹرز اہم رو ل ادا کرسکتے ہیں ۔ دوسری طر ف کہا جا ر ہا ہے کہ طا ہر القادر ی کو عمرا ن خان دو نو مبر د ھر نے کے لئے ان کے شانہ بشانہ چلنے لئے "ایک مخصو ص " پیغا م کا انتظا ر ہے جو انہیں نہیں مل سکا اور نہ ہی ملنے کا مکا ن ہے جس سے اس با ت کاقوی امکا ن ہے کہ وہ د ھر نہ میں اپنے رواسیتی جاہ وجلا ل کے ساتھ شر یک نہیں ہوں گئے ۔ ذرا ئع کاکہنا ہے کہ پیپلز پارٹی آئند ہ چند روز میں عمرا ن خا ن کے مقابلے میں حکومت کی ہمایت کردے گئی ۔ اے این پی ، جے یو ائی پہلے ہی حکومت کے ساتھ کھڑی ہے جما عت اسلا می کی بھی عمرا ن خا ن کو اس با ر حمایت حاصل نہیں ہو سکے گی اور انہیں بھی اس مر تبہ سولو فلا ئیٹ کر نی پڑے گئی ۔ طا ہر القادری کی ممنکہ کمی کو پورا کر نے کے لئے عمرا ن خان چھوٹی مذہبی جما عتوں اور وکلا تنظمو ں کی حما یت کی کو شش کر ر ہے ہیں ۔

مزید : ملتان صفحہ اول