27 اکتوبر ،کشمیر کی تاریخ کا سیاہ باب

27 اکتوبر ،کشمیر کی تاریخ کا سیاہ باب

14اگست 1947 ء کو بر صغیر تقسیم ہوا جس کے نتیجے میں دو ممالک معرض وجود میں آئے، ہندوستان اور پاکستان تقسیم ہند کے فارمولے کے تحت یہ طے کیا گیا کہ مسلم اکثریت والے علاقے پاکستان کے ساتھ الحاق کریں گے جبکہ ہندو اکثریت کے علاقے ہندوستان کے ساتھ الحاق کریں گے۔ اسی فارمولے کے تحت حیدر آباد اور جونا گڑھ جن میں اکثریت ہندو آبادی کی تھی لیکن ان کے راجہ مسلمان تھے،اس کا الحاق ہندوستان کے ساتھ کیا گیا، لیکن کشمیر کے معاملے میں ہندوستان نے دغا بازی اور ازلی مسلم دشمنی کا ثبوت دیا اور 80 فیصد آبادی مسلمان ہونے کے باوجود جموں اور کشمیر کا الحاق ہندوستان کے ساتھ کر دیا۔ہندوستان نے 27 اکتوبر 1947ء کو صبح 9 بجے سری نگر ائیر پورٹ پر اپنی افواج اتارنی شروع کر دیں اور کشمیر پر غاصبانہ قبضہ کر لیا اسی لئے کشمیری اور پوری دنیا میں کشمیریوں سے محبت رکھنے والے لوگ بشمول پاکستان اس دن کو یوم سیاہ کے طور پر مناتے ہیں۔27 اکتوبر سے آج تک ہندو درندہ صفت افواج کے مظالم کشمیریوں پر جاری ہیں، جس کے نتیجے میں ڈیڑھ لاکھ کے قریب کشمیری اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرچکے ہیں ہزاروں نوجوان کشمیر اور ہندوستان کی جیلوں میں بند ہندو بنئے کی اذیتوں کو برداشت کر رہے ہیں۔ ہزاروں کشمیری بہنوں کی عزتیں ہندو درندے پامال کر چکے ہیں۔ ہندوستانی افواج کے پیلٹ گن کے بے دریغ اور وحشیانہ استعمال کی وجہ سے سینکڑوں کشمیری بینائی سے محروم ہو چکے ہیں۔ ہندوستان نے کشمیر پر قبضہ اس بنیاد پر کیا کہ ہری سنگھ نے جو اس وقت کا جموں اور کشمیر کا راجہ تھا، ہندوستان کے ساتھ ایک معاہدہ کیا ہے، جس میں کشمیر کی انڈیا کے ساتھ الحاق کی درخواست کی گئی ہے، لیکن انڈیا کسی بھی فورم پہ ایسی کوئی دستاویز کو پیش نہیں کر سکا۔

ہندوستان کے مؤقف کے مطابق ہری سنگھ نے لارڈ ماؤنٹ بیٹن کو ایک خط لکھا کہ کشمیر کے حالات خراب ہیں، لہٰذا مجھے فوجی مدد بھیجی جائے۔ اس خط کے جواب میں لارڈ ماؤنٹ بیٹن نے خط لکھا کہ فوری طور پر حالات کو بہتر کرنے کے لئے فوج روانہ کی جارہی ہے، لیکن جیسے ہی حالات ٹھیک ہو ں گے فوج واپس بلا لی جائے گی اور متنازعہ ریاستوں کا فیصلہ ان کے عوام کی امنگوں کے مطابق کیا جائے گا، لیکن 70 سال گزر جانے کے باوجود ہندوستان نے اپنی روایتی دغابازی کا ثبوت دیا اور آج تک بزور بازو کشمیریوں کو اس بات کو منوانے کی کوشش کر رہا ہے کہ وہ ہندوستان کے ساتھ الحاق کو تسلیم کریں، لیکن کشمیریوں نے 70 سالہ مظالم کے باوجود اس غاصبانہ قبضے کو کبھی تسلیم نہیں کیا اور ہمیشہ سے اس کی مزاہمت کرتے آ رہے ہیں۔7 دہائیاں گزر جانے کے باوجود بھی ہندوستان کشمیریوں سے بزور بازو بھی یہ نہیں منوا سکا کہ کشمیر بھارت کا اٹوٹ انگ ہے۔ آج نہ صرف کشمیری 7 لاکھ انڈین آرمی کے مقابلے میں سینہ سپر ہیں، بلکہ پاکستان بھی کشمیریوں کی انسانی اخلاقی سیاسی اور سفارتی مدد ہر فورم پر کر رہا ہے، لیکن عالمی ادارے اور اقوام متحدہ اس معاملے میں خاموش تماشائی کا کردار ادا کر رہی ہے۔ ہندوستان اس خوبصورت وادی کے بدن کو اپنی ریاستی دہشت گردی کے ذریعے نوچ رہا ہے اور اس کے مظالم کا یہ سلسلہ پچھلے ستر سال سے جاری و ساری ہے۔ بھارت کے ان مظالم کے نتیجے میں آج تک کم و بیش ایک لاکھ کشمیری اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں اور بھارتی بھیڑیے وہاں کشمیر میں عورتوں کی بے حرمتی کرنے سے بھی گریزاں نہیں۔کشمیری عوام اپنے بنیادی حقوق سے بھی محروم ،مظالم کے پہاڑ سہتے چلے آرہے ہیں،پھر پوری دنیا کی مجرمانہ خاموشی بھی کشمیری عوام کے زخموں پر نمک پاشی سے کچھ کم نہیں۔

یہ مسئلہ ہے کیا؟ اس کو جاننے کے لئے تھوڑا پس منظر کو دیکھنا بہت ضروری ہے۔برصغیر پاک و ہند کے شمال مغرب میں واقع یہ ریاست جس کا کل رقبہ 69547 مربع میل ہے۔1947ء کے بعد ریاست جموں و کشمیر دو حصوں میں تقسیم ہو گئی۔اس وقت بھارت 39102مربع میل پر قابض ہے جو کہ مقبوضہ کشمیر کہلاتا ہے۔اس کا دارلحکومت سری نگر ہے،بقیہ علاقہ آزاد کشمیر کہلاتا ہے،جو 25000مربع میل رقبہ پر محیط ہے، اس کا دارالحکومت مظفرآباد ہے۔ریاست کی کل آبادی ایک کروڑ کے قریب ہے،جس میں تقریباً25لاکھ آزاد کشمیر میں ہیں۔ہندو راجاؤں نے طویل عرصے تک اس علاقے میں حکومت کی۔ 1846ء میں انگریزوں نے ریاست جموں و کشمیر کو 75لاکھ روپوں کے عوض ڈوگرا راجہ گلاب سنگھ کے ہاتھوں فروخت کر دیا۔کشمیری آبادی کا اسی فیصد مسلمانوں پر مشتمل ہے۔ہندو راجہ نے بزور شمشیر مسلمانوں کو غلام بنائے رکھا۔تقسیم ہند کے بعد ہندو مہاراجہ ہری سنگھ نے مسلمانوں کی مرضی کے خلاف چھبیس اکتوبر 1947ء کو بھارت کے ساتھ ریاست کے الحاق کا اعلان کر دیا۔اس کے نتیجے میں پاکستان اور بھارت کے درمیان جنگ کا آغاز ہو گیا۔ سلامتی کونسل کی مداخلت پر یکم جنوری 1949ء کو جنگ بندی ہو گئی۔سلامتی کونسل نے 1948ء میں منظور شدہ قرار داد میں بھارت اور پاکستان کو کشمیر سے افواج نکالنے اور رائے شماری کروانے کے لئے کہا۔بھارتی وزیراعظم پنڈت جواہر لال نہرو نے رائے شماری کروانے کا وعدہ کر لیا، مگر بعد میں اس سے منحرف ہو گیا۔پاکستان نے بھارت سے آزاد کرائے گئے علاقے میں آزاد کشمیر کی ریاست قائم کردی۔کشمیر کا تنازعہ اب تک جاری ہے۔ اس دوران پاکستان میں کئی حکومتیں آئیں اور گئیں، مگر کوئی خاطر خواہ پیشرفت نہ ہو سکی،البتہ 1957ء میں بھارت نے کشمیری عوام کو ایک رسمی سی الگ شناخت دینے کے لئے ایک قانون پاس کیا،جس کے مطابق بھارتی قانون کی دفعہ 370 کے تحت کوئی بھی بھارتی شہری کشمیر میں جائیداد نہیں خرید سکے گا جو کشمیری نہ ہو اور یہ سب کشمیریوں کی تحریک آزادی کے دباؤ کا ہی نتیجہ تھا۔ پاکستان سفارتی سطح پر اس مسئلے کو ہر دور میں اُجاگر کرتا رہا، مگر کچھ حاصل نہ ہو سکا۔اسی ضمن میں پاکستان اور بھارت کے درمیان تین جنگیں بھی ہو چکی ہیں، جس کے نتیجے میں کشمیر تو آزاد نہ ہو سکا، مگر مشرقی پاکستان سے ہاتھ دھو بیٹھے،جو آج بنگلہ دیش کی صورت میں پاکستان کے ساتھ دشمن جیسا برتاؤ کئے ہوئے ہے۔

1972ء میں پاکستان کے وزیراعظم ذوالفقار علی بھٹو اور بھارتی وزیراعظم اندراگاندھی کے درمیان ایک معاہدہ طے پایا جو شملہ معاہدے کے طور پر جانا جاتا ہے۔دراصل شملہ معاہدہ اس معاہدے کی یاد دہانی تھی جو تاشقند معاہدہ صدر ایوب کے دور میں ہوا تھا۔اس معاہدے کے بعد دونوں اطراف سے ایک بار پھر سے کشمیر کے مسئلے کو حل کرنے پر اتفاق ہوا، مگر وہ وعدہ ہی کیا جو وفا ہو جائے۔اس طرح پاکستان نے ہر فورم پر مسئلہ کشمیر کو حل کرنے کے لئے جنگ لڑی،خواہ وہ سفارتی محاظ ہو یا پھر جنگ۔بھارت نے بہت کوشش کی کہ کسی طرح مسئلہ کشمیر کو دبایا جائے۔ جس کے لئے اس نے کبھی کٹھ پتلی حکومت بنا کر کشمیریوں کو چپ کرانے کی کوشش کی تو کبھی ظلم اور تشدد کے پہاڑ توڑ کر،مگر کشمیری حریت پسندوں کی یہ تحریک اور مضبوط ہوتی گئی،کیونکہ ظلم تو پھر ظلم ہے بڑھتا ہے تو مٹ جاتا ہے۔آج ایک بار پھر بھارت کشمیریوں کے اوپر چڑھ دوڑا ہے اور ظلم کی نئی داستانیں رقم کر رہا ہے، مگر دنیا خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے اور اسی ظلم کی بھینٹ برہان مظفر وانی شہید کو چڑھا دیا گیا،جس کے خون نے تحریک آزادی کو جلا بخشی ہے اور اب یہ تحریک کشمیر کے ایک کونے سے لے کر دوسرے کونے تک پھیل چکی ہے۔بھارتی مظالم کی داستان لکھنے کے لئے میرے پاس الفاظ کی کمی ہے، کیونکہ جس درندگی کا مظاہرہ بھارت ریاستی دہشت گردی کے ذریعے کر رہا ہے ناقابل بیان ہے۔اس وقت پوری دنیا کا میڈیا جو بھارتی مظالم کی داستانیں سنا رہا ہے، اس کے مطابق چھ دنوں میں پچاس سے زائد کشمیری شہید ہو چکے ہیں اور کم و بیش دو سے تین ہزار لوگ شدید زخمی ہیں،جبکہ سینکڑوں ایسے ہیں جن کی بینائی چلی گئی ہے اور بہت سے افراد تشویشناک حالت میں ہیں۔ایسے میں پاکستان کی خارجہ پالیسی پر سوالیہ نشان اٹھ رہے ہیں،اگر ہم واقعی اس مسئلے کا حل چاہتے ہیں تو ہمیں اس کو حل کرنے کے لئے سنجیدہ کوششیں کرنا ہوں گی، کیونکہ کشمیریوں کی جنگ ہماری بقاء کی جنگ ہے اور یہ جنگ اس وقت تک ختم نہیں ہو سکتی،جب تک کہ کشمیریوں کا حق ان کو نا مل جائے۔

بھارت اور پاکستان دونوں ایٹمی طاقتیں ہیں اس لئے جنگ کا تو سوال ہی پیدا نہیں ہوتا، مگر ہمیں یہ جنگ نظریاتی سرحدوں پر لڑنی ہے، جس کے لئے کسی بھی ملک کا میڈیا سب سے اہم کردار ادا کرتا ہے۔میڈیا ہی نظریاتی سرحدوں کا حقیقی پاسبان ہوتا ہے، مگر معذرت کے ساتھ کہنا چاہوں گا ہمارا میڈیا اس میں بری طرح ناکام ہوا ہے۔

مزید : ایڈیشن 2