شعبہ صحت میں ہنگامی بنیادوں پر اصلاحات ناگزیر ہیں،یاسمین راشد

شعبہ صحت میں ہنگامی بنیادوں پر اصلاحات ناگزیر ہیں،یاسمین راشد

لاہور ( جنرل رپورٹر) وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد نے شعبہ صحت پنجاب میں ٹھوس اصلاحات کا عمل آگے بڑھانے کیلئے ماہرین سے مشاورت شروع کر دی ہے۔ اس ضمن میں یکم اور 2 نومبر کو لاہور میں قومی ہیلتھ پالیسی اور صوبائی سٹریٹجک فریم ورک کے موضوع پر مشاورتی ورکشاپ طلب کی گئی ہے جس کا افتتاح وزیر صحت خود کریں گی۔ڈاکٹر یاسمین راشد نے کہا کہ شعبہ صحت کے استحکام کے لئے ہنگامی بنیادوں پر اصلاحات وقت کی ضرورت ہے۔ محکمہ صحت پنجاب نے ملکی تاریخ میں پہلی بار ہیلتھ ورک فورس سٹریٹجی کو حتمی شکل دے دی ہے ۔

پنجاب حکومت کی منظوری کے بعد اس حکمت عملی کو پنجاب ہیلتھ ورک فورس سٹریٹجک فریم ورک 2018۔2030کا حصہ بنایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ یہ ورک فورس حکمت عملی پنجاب پبلک ہیلتھ ایجنسی (پی پی ایچ اے) نے عالمی ادارہ صحت کی تکنیکی معاونت سے تیار کی ہے۔پی پی ایچ اے کی چیف ایگزیکٹو آفیسر ڈاکٹر شبنم سرفراز نے سٹریٹجی کی تیاری کیلئے پاکستان اور بیرون ملک کے 50سے زائد ماہرین سے مشاورت کی۔وزیر صحت نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ عالمی ادارہ صحت کے مطابق پاکستان جیسے ترقی پذیر ممالک میں 55فیصد آبادی کو موزوں ہیلتھ ورک فورس کی کمی کے باعث صحت عامہ کی سہولیات تک رسائی حاصل نہیں۔ہمارے ملک میں ہر ایک ہزار میں سے صرف 1.45افراد کو تربیت یافتہ ورک فورس کی سہولت دستیاب ہے۔ بڑھتی آبادی کے تناظر میں 2030میں دنیا کو ہیلتھ ورکرز کی 18فیصد کمی کا سامنا کرنا پڑے گا۔پاکستان کو 10لاکھ ہیلتھ ورکرز کی کمی درپیش ہوگی جس میں سے نصف شرح کا تعلق پنجاب سے ہوگااس صورتحال کا تدارک کرنے کے لئے قبل از وقت اقدامات ناگزیر ہیں۔ڈاکٹر یاسمین راشد نے کہا کہ مشاورتی ورکشاپ میں اس پہلو پر خاص طور پر بحث کرکے تجاویز تیار کی جائیں گی۔

مزید : میٹروپولیٹن 1