نریندرمودی اوراسرائیلی وزیراعظم کوقصائی کہاجاتاہے،ملکی لٹیروں سے حساب نہ لے سکے تو ہمیں حکومت میں بیٹھنے کا کوئی حق نہیں:فواد چودھری

نریندرمودی اوراسرائیلی وزیراعظم کوقصائی کہاجاتاہے،ملکی لٹیروں سے حساب نہ ...
نریندرمودی اوراسرائیلی وزیراعظم کوقصائی کہاجاتاہے،ملکی لٹیروں سے حساب نہ لے سکے تو ہمیں حکومت میں بیٹھنے کا کوئی حق نہیں:فواد چودھری

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)وفاقی وزیراطلاعات فوادچودھری نے کہا ہے کہ نریندرمودی اوراسرائیلی وزیراعظم کوقصائی کہاجاتاہے،نریندرمودی نےبھارتی شہرگجرات میں قتل عام کیا ہے،اگر ہم اس ملک کے لٹیروں سے حساب نہ لے سکے تو ہمیں حکومت میں بیٹھنے کا کوئی حق نہیں ہو گا،پاکستان کی سر زمین پر کوئی اسرائیلی طیارہ نہیں اترا بلکہ یہ صرف مخالفین کی پھیلائی ہوئی خبریں ہیں۔

نجی ٹی وی چینل ’’دنیا نیوز‘‘ کے مطابق وزیراطلاعات فوادچودھری نے جہلم میں بھارت کے خلاف ’’یوم سیاہ‘‘ کے حوالے سے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج کےدن بھارتی فوج نےکشمیرمیں ہلہ بولا اور آج کے دن بھارت نے کشمیریوں کو غلام بنانے کی مذموم کوشش کی ،پاکستان سمیت دنیا بھر میں مقیم کشمیری آج یوم سیاہ منا رہے ہیں،کشمیری عوام کےحق آزادی کیلئےہمیشہ ساتھ کھڑےہیں،یوم سیاہ ہمیشہ جاری نہیں رہے گا، انشاء اللہ کشمیر جلد بھارت سے آزادی لے گا اور مقبوضہ کشمیرجلدآزاد ہوگا،نریندرمودی نےبھارتی شہرگجرات میں قتل عام کیا، نریندرمودی اوراسرائیلی وزیراعظم کوقصائی کہاجاتاہے۔انہوں نے کہا کہ  اسرائیلی طیارےسے متعلق خبربےبنیادہے،سازش کے تحت یوم سیاہ کو متنازعہ بنانے کے لیے کسی اسرائیلی کی پاکستان آمد کا شوشہ چھوڑا گیا ،اس بے بنیاد خبر کے ذریعے پاکستان کی حکومت اور فوج کو متازعہ بنانے کی کوشش کی گئی،اسرائیل کے صحافی کے ٹویٹ کے ذریعے پروپیگنڈا کیا گیا اور احسن اقبال بھی  اسرائیلی صحافی کےٹویٹ پربیان دے رہے ہیں ،اسرائیلی طیارےسےمتعلق سول ایوی ایشن نےتردیدکردی ہے،فضل الرحمان معاملےکومتنازع بنانےکی کوشش کررہےہیں، 1990سے مولانا فضل الرحمان کشمیر کمیٹی کے چیئرمین چلے آرہے ہیں لیکن انہوں نے بطور چیئرمین کشمیر کمیٹی آج تک کوئی بیان نہیں دیا،فضل الرحمان ، آصف زرداری اور نواز شریف کی سیاست ڈوب رہی ہے، اپوزیشن کی سیاست صرف بدعاؤں تک محدود ہو گئی ہے،اپوزیشن کےپاس نظریہ ہےنہ لیڈرشپ۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم نے اپنے پہلے خطاب میں مدینہ کی ریاست کا ماڈل اپنانے کا وعدہ کیا ،ہم احتساب کے عمل کو غیر متنازع اور یقینی بنائیں گے کیونکہ وزیر اعظم عمران خان نے اعلان کیا تھا کہ ہم پاکستانی ریاست کو مدینہ کی ریاست کے ماڈل پر کھڑا کریں گے اور مدینہ کی ریاست میں قانون سب کے لیے ایک تھا،1971میں پاکستان کا کل قرض 31ارب روپے تھا،پرویز مشرف کے دور میں پاکستان کا کل قرض 6ہزار ارب تھا، نواز شریف اور زرداری کے دور میں ملکی قرضوں میں 24ہزار ارب کا اضافہ ہوا،یہ سارا پیسہ جو قرض کی صورت میں لیا گیا وہ سابقہ 10 سالوں کے حکمرانوں کی جیبوں میں گیا،  اتنا پیسہ اگر پاکستان کہ بہتری کے لیے خرچ ہوتا تو پاکستان کے حالات آج ایسے نہ ہوتے لیکن اس ملک میں چوروں اور ڈکیتوں نے لوٹ مار کا بازار گرم رکھا تھا، پی ٹی آئی چوروں اور ڈاکوؤں کو الٹا لٹکانے کا وعدہ پورا کرے گی۔وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا تھا کہتحریک انصاف کو پاکستان کی مڈل کلاس نے منتخب کیا ہے کیونکہ انہیں پی ٹی آئی سے بہتری کی امید ہے،عوام نے تحریک انصاف کو احتساب کے لیے ووٹ دیا ہے، اس ملک کا سب سے بڑا مسئلہ کرپشن ہے، جس کی وجہ سے ہمارا ملک کبھی ترقی نہیں کر سکا۔

وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ سابقہ حکمرانوں نے پاکستان کے لوگوں کا پیسہ اپنے بچوں پر لگایا ہے، ان کے ڈرائیورز اور فالودے والے کے اکاؤنٹس سے کروڑوں روپے نکل رہے ہیں،ہم ان سے یہ پیسہ واپس نکلوائیں گے،یہ لوگ تنقید کررہے ہیں کہ عمران خان نے سعودی عرب اور چین سے قرضہ لے لیا ہے، میں انہیں یہ بتانا چاہتا ہوں کہ عمران خان اپنے بچوں کے لیے نہیں اس ملک کے بچوں کے لیے پیسہ لے رہے ہیں اور وہ ایک ایک پائی اس ملک کی فلاح اور بہتری پر ہی خرچ کریں گے،لٹیروں اور ڈاکوؤں کو حساب دینا پڑے گا، اگر حساب کتاب نہیں ہوا تو ملک کا نقصان ہو گا کسی کو این آر او نہیں ملےگا ، کوئی اس کی توقع نہ رکھے۔انہوں نے کہا کہ جب میں مخالفین کو کہتا ہوں کہ انہوں نے پاکستان کے نام پر لیے گئے قرض کے پیسے ڈاکوؤں کی طرح لٹائے ہیں تو یہ ناراض ہو جاتے ہیں، آج پاکستان کے سیاسی حالات ایک دم ٹھیک ہو جائیں اگر عمران خان ان سے حساب مانگنا چھوڑ دے، لیکن ایسا نہیں ہو گا انہیں حساب دینا ہو گا۔

مزید : قومی