مذہبی مقامات امانت ہیں، تحفظ یقینی بنایا جائے : مفتی اعظم فلسطین

مذہبی مقامات امانت ہیں، تحفظ یقینی بنایا جائے : مفتی اعظم فلسطین
مذہبی مقامات امانت ہیں، تحفظ یقینی بنایا جائے : مفتی اعظم فلسطین

  

مقبوضہ بیت المقدس (صباح نیوز)فلسطین کے مفتی اعظم الشیخ محمد حسین نے کہا ہے کہ فلسطین بالخصوص بیت المقدس میں موجود مذہبی مقامات، عبادت گاہیں، ان سے منسلک املاک اور ایک ایک گھر پوری قوم کی امانت ہے۔ اس امانت کا تحفظ یقینی بنایا جائے۔

مرکز اطلاعات فلسطین کے مطابق مفتی اعظم فلسطین نے مسجد اقصیٰ میں نمازیوں کو ہراساں کرنے اوریہودی مذہبی تہواروں کی آڑ میں دونوں مقدس مقامات کے تقدس کو پامال کرنے کی مذمت کی۔ ا نہوں نے کہا کہ اسرائیل فلسطین میں مقدس مقامات کی بے حرمتی کرکے عالمی قوانین کی سنگین پامالیوں کا مرتکب ہو رہا ہے۔ فلسطینیوں کو عبادت کی ادائیگی سے روکا ا رہا ہے جب کہ یہودی اشرار کو کھلی چھٹی دی گئی ۔ اسرائیلی حکومت نے ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت مسجد ابراہیمی اور مسجد اقصیٰ کو یہویوں کے لیے مباح اور فلسطینی مسلمانوں کے لیے حرام قرار دے رکھا ہے۔

الشیخ محمد حسین نے کہا کہ القدس میں فلسطینیوں کی نجی اور مذہبی املاک چوری کی جا رہی ہیں۔ انہوں نے بیت المقدس میں عیسائی کمیونٹی کے گرجا گھروں کی مرمت پر پابندی کے خلاف احتجاج کے دوران قابض فوج ہے ہاتھوں طاقت کے استعمال کی شدید مذمت کی۔ مفتی اعظم نے کہاکہ فلسطین کے عیسائی اپنے مقدس مقامات کی مرمت کرنا چاہتے ہیں اور اسرائیل انہیں ان کی عبادت گاہوں سے دور کر کے مذہبی آزادیوں پر قدغنیں لگا رہا ہے۔

مزید : بین الاقوامی