مصری عدالت نے تین مشتبہ انتہا پسند مسلمانوں کو 15سال قید کی سزا سنا دی

مصری عدالت نے تین مشتبہ انتہا پسند مسلمانوں کو 15سال قید کی سزا سنا دی

قاہرہ(آن لائن) مصری عدالت نے تین مشتبہ انتہا پسند مسلمانوں کو ایک پار ک میں لڑکی کے ساتھ بیٹھے ہوئے نوجوان کو ہلاک کرنے کے الزام میں 15سال قید کی سزا سنا دی ۔سرکاری خبررساں ایجنسی مینا کے مطابق شمال مشرقی شہر سوئز میں مقدمے کی سماعت کے دوران یہ فیصلہ سنایا گیا کہ یہ تینوں افراد انجینرنگ کے مقامی طالب علم احمد حسین عید کے قتل میں ملوث پائے گئے ہیں ۔اس موقع پر عدالت کے گرد پولیس کا زبردست پہرہ تھا ،ایجنسی کے مطابق استغاثہ نے الزام لگایا کہ انہوں نے خود اپنے مذہبی اصولوں پر عمل نہ کرنیوالے لوگوں کیخلاف کارروائی کے لئے ایک نگران گروپ تشکیل دیاہے ، تاہم ان تینوں ملزمان نے اس الزام کی تردید کی ہے ۔یہ تینوں ملزمان رشتہ ازدواج میں منسلک ہوئے بغیر پارک میں اکٹھے بیٹھے ہوئے نوجوان عید اور ایک اور نوجوان عورت کے پاس آئے اور ان سے سوال وجواب شروع کردیئے ، اس دوران ان کے درمیان لڑائی چھڑ گئی جس میں عید بری طرح زخمی ہو گیا اور بعد ازاں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا ۔اس واقعہ نے مصر میں جذباتی ردعمل پیدا کردیا ہے اور عوام میں یہ خدشہ محسوس کیا جارہا ہے کہ اخلاقی اقدار کی نگرانی کرنیوالے خود نگران گروپ وجود میں آگئے ہیں

مزید : عالمی منظر