شمالی چھاونی پولیس نے پیٹی بھائی کو تھانے کے چکر لگوانے شروع کر دیئے

شمالی چھاونی پولیس نے پیٹی بھائی کو تھانے کے چکر لگوانے شروع کر دیئے

  



لاہور(کرائم سیل) تھانہ شمالی چھاونی پولیس اہلکاروں نے اپنے پیٹی بھائی کو بھی سائلوں کی طرح تھانہ کے چکر لگوانے شروع کر دیئے۔پولیس لائن میں تعینات حوالدار مخالفین کی جانب سے دی گئی درخواست پر سات ماہ سے تھانہ کے چکر لگانے پر مجبور ہو گیا۔تفصیلات کے مطابق تنویر حسین کانسٹیبل پولیس لائن میں تعینات ہے ۔سات ماہ قبل گھریلو جھگڑے پر اس کے رشتہ دار بشیر گجر اور اس کے بیٹے رفیق گجر نے اس کے خلاف ایک درخواست تھانہ شمالی چھاونی میں دی تھی نمائندہ پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے تنویر حسین اور اس کے نانا محتاب دین اور دوست محمد امین نے بتایا کہ انکا بشیر گجر سے سات ماہ قبل گھریلو معاملات میں جھگڑا ہوا تھا جس پر اس کے بیٹے رفیق گجر نے اس کے خلاف پولیس میں بھرتی کروانے کی غرض سے تین لاکھ پچاس ہزار ہتھیانے کا الزام لگا دیا اور ایک درخواست تھانہ شمالی چھاونی میںدے دی ۔اس معاملے کو حل کروانے کے لیے ہم سات ماہ سے تھانہ کے چکر لگا رہے ہیں لیکن پولیس اہلکار لیت و لعل سے کام لیتے ہوئے ہمیں ہر روز کئی گھنٹے بٹھا کر ٹرخا دیتے ہیں۔انہوں نے الزام لگایا کہ پولیس اہلکاروں نے مخالفین سے مبینہ طور پر رشوت لے لی ہے اور اپیل کی کہ پولیس کے اعلٰی حکام ا س معاملے میں ایکشن لیتے ہوئے ہمارا مسئلہ جلد حل کروایا جائے۔تھانہ شمالی چھاونی میں رابطہ کیا گیا تو انہوں نے بتایا کہ کیس کے حوالے سے تفتیش کی جارہی ہےرشوت لینے والی بات میں کوئی صداقت نہیں ہے۔

مزید : علاقائی