پاکستان میں دہشتگردوں کیلئے کوئی جگہ نہیں آپریشن کسی کی خوشنودی کیلےءنہیں کر رہے ،سیکرٹری خارجہ

پاکستان میں دہشتگردوں کیلئے کوئی جگہ نہیں آپریشن کسی کی خوشنودی کیلےءنہیں ...

  



                      نیویارک (عثمان شامی) وزیراعظم نواز شریف آج اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے اپنے خطاب کے دوران کشمیر سمیت تمام موضوعات پر بات کریں گے۔ اس بات کا انکشاف سیکرٹری خارجہ اعزاز احمد چودھری نے یہاں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ اس سے قبل خیال کیا جارہا تھا کہ بھارت کے ساتھ بہتر تعلقات کی خواہش کو مدنظر رکھتے ہوئے شائد وزیراعظم اپنی تقریر میں مسئلہ کشمیر کے حوالے سے بات نہ کریں تاہم سیکرٹری خارجہ نے ان خبروں کو رد کرتے ہوئے کہا ہے کہ مسئلہ کشمیر سمیت تمام اہم معاملات پر اپنا نقطہ نظر وزیراعظم دنیا کے سامنے بیان کریں گے۔ سیکرٹری خارجہ کا کہنا تھا کہ بھارت کے ساتھ مذاکرات میں خلل بھارت کی جانب سے ڈالا گیا ہے لہٰذا دوبارہ بات چیت شروع کرنے کے لئے ضروری ہے کہ بھارت اس سلسلے میں حکومت پاکستان سے رابطہ کرے۔ ملک میں سیاسی بحران کے باوجود وزیراعظم کی امریکہ آمد کے بارے میں سیکرٹری خارجہ کا کہنا تھا کہ یہ دورہ اس لئے ضروری تھا تاکہ اس کے ذریعے قوم کو امید کا پیغام جائے اور بتایا جائے کہ مشکلات کے باوجود زندگی جاری رہتی ہے۔ سیاسی بحران کے باعث دنیا سے قطع تعلق نہیں کیا جاسکتا۔ وزیراعظم کی مختلف سربراہان مملکت سے ملاقاتوں کے بارے میں سیکرٹری خارجہ نے میڈیا کو بریف کیا۔ بظاہر معلوم ہوتا ہے کہ وزیراعظم نواز شریف ملک میں جاری بحران کے حوالے سے مختلف ممالک کے سربراہان کو اعتماد میں لینے کے لئے کوشاں ہیں۔ راستے میں برطانیہ میں قیام کے باعث وزیراعظم نواز شریف امریکی صدر اوباما کی جانب سے سربراہ مملکت کو خوش آمدید کہنے کے لئے دیئے جانے والے اعشائیے میں شرکت نہ کرسکے۔ جب سیکرٹری خارجہ سے پوچھا گیا کہ لندن میں قیام اتنا ضروری کیوں تھا تو ان کا کہنا تھا کہ وزیراعظم کا طیارہ چھوٹا ہے لہٰذا براہ راست امریکہ آنا ممکن نہ تھا۔ تاہم صحافیوں کو اس منطق پر یقین کرنے میں خاصی دشواری پیش آئی۔سیکرٹری خارجہ اعزاز احمد چود ھری نے دوٹوک الفاظ میں واضح کیاہے کہ پاکستان میں دہشت گردوں کےلئے کوئی جگہ نہیں، آپریشن ضرب عضب کسی خارجی قوت کی خوشنودی حاصل کرنے کےلئے نہیں کررہے، بقائے باہمی کے اصول پرعمل پیراہیں، اپنی سرزمین کسی کیخلاف استعمال نہیں ہونے دےں گے دوسروں سے بھی اسی رویے کی توقع رکھتے ہیں، کسی پاکستانی باشندے کے عراق اور شام میں داعش کے ساتھ مل کرلڑنے کا علم نہیں ،کشمیراہم مسئلہ ہے ،محض کسی کی خواہش پر سردخانے میں نہیں ڈالاجاسکتا ، کشمیریوں کو حق خودارادیت ملنا چاہیے ۔نیویارک میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے سیکرٹری خارجہ نے کہا کہ پاکستان نہ صرف ہمسایہ ملکوں بلکہ پورے خطے کے ممالک کے ساتھ پرامن تعلقات چاہتا ہے بلکہ خطے میں امن و استحکام کے لئے مثبت کردار ادا کر رہا ہے ہم اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ خطے میں پائید ار امن کے لئے ہمسایہ ملکوں کے درمیان بہتر تعلقات ناگزیر ہیں۔ اعزازاحمدچوہدری نے کہاکہ اسلام آباد میں پاک بھارت سیکرٹری خارجہ سطح کی ملاقات بھارت نے منسوخ کی تھی اب بھی بال بھارت کے کورٹ میں ہے اگر بھارت بات چیت کا خواہشمند ہے تو اسے ہمارے ساتھ رابطہ کرنا ہوگا۔انہوں نے کہاکہ پاکستان دہشتگردی کے خاتمے کے لئے پر عزم ہے اور اس مقصد کے لئے موثر اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں پاکستان میں دہشتگردوں کے لئے کوئی جگہ نہیں ہے آپریشن ضرب عضب کا مقصد کسی ملک کی خوشنودی حاصل کرنا نہیں ہے ۔ ہم اپنی سرزمین کسی دوسرے ملک کے خلاف دہشتگردی کے لئے استعمال نہیں ہونے دےں گے اسی طرح دوسرے ملک بھی پاکستان کی سلامتی اور داخلی خودمختاری کا احترام کریں ۔ہم باہمی احترام اور برابری پر مبنی تعلقات پر یقین رکھتے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ امید ہے افغانستان میں نئی حکومت کے آنے کے بعد دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات میں بہتری آئے گی۔ انہوں نے کہاکہ دولت مشترکہ وزارتی کانفرنس میں پاک بھارت وزرائے خارجہ کے درمیان ملاقات نہیں ہوئی۔ انہوں نے کہاکہ نیو یارک میں وزیراعظم امریکی نائب صدر جوزف بائیڈن سمیت مختلف عالمی رہنماﺅں سے ملاقاتیں کرینگے تاہم بھارتی وزیراعظم سے ملاقات کا کوئی امکان نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ وزیراعظم نواز شریف کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں شرکت صرف بین الاقوامی معاملات پر بات کرنے کا موقع نہیں بلکہ اس فورم سے دنیا کو بتایا جائے گا کہ پاکستانی حکومت کس طرح معاشی ایجنڈے پر آگے بڑھ رہی ہے اور دنیا کے ساتھ پرامن تعلقات چاہتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ شمالی وزیرستان میں دہشت گردوں کے خلاف فوجی آپریشن تیزی اور منظم طریقے سے جاری ہے ۔ ہمیں عراق اور شام میں داعش کے ساتھ مل کر لڑنے والے کسی پاکستانی کے بارے میں علم نہیں ہے اور نہ ہی اس کی تصدیق کی جاسکتی ہے۔ پاکستان میں دہشت گردوں کیلئے کوئی جگہ نہیں۔ پاکستان دہشت گردوں کے خاتمے کیلئے موثر اقدامات اٹھا رہا ہے ۔

مزید : صفحہ اول


loading...