اسلام آباد میں دھرنوں پر بیٹھے افراد گھر جانا چاہتے ہیں، لاس اینجلس ٹائمز

اسلام آباد میں دھرنوں پر بیٹھے افراد گھر جانا چاہتے ہیں، لاس اینجلس ٹائمز

  



نیو یا رک (آن لائن)امریکی اخبار” لاس اینجلس ٹائمز“نے کہا ہے کہ اسلام آباد میں دھرنوں پر بیٹھے افراد گھرجانا چاہتے ہیں جبکہ انسانی فضلے کی بو،حفظان صحت کی خراب صورتحال اور بچوں کی دیکھ بھال میں مشکلات کی وجہ سے بہت سی خواتین اپنے گھروں کو واپس لوٹ چکی ہیں۔امریکی اخبار ” لاس اینجلس ٹائمز“ نے اپنی تازہ رپورٹ میں انکشاف کیا ہے کہ اسلام آباد میں جاری دھرنوں کے شرکاء اب پریشانی کا شکار ہیں۔ تحریک انصاف کے دھرنے میں شام کو عمران خان خطاب کےلئے کنٹینر سے باہر نکلتے ہیں ،اس وقت مظاہرین کی کچھ تعداد بڑھ جاتی ہے اور وقتی طورپران کا موڈ اچھا ہوتا ہے۔ دھرنے میں شامل ہری پورکی ایک خاتون اوراس کے دو رشتے داروں کو روزانہ 400 روپے کی ادائیگی اورانقلاب کے بعد گھر دینے کے وعدے پر اسلام آباد لایا گیا ہے۔رپورٹ کے مطابق مظاہرین میں زیادہ ترنوکری پیشہ افراد اور مزدور طبقہ ہے جو احتجاجی رہنماوں اور سیاست سے وابستہ اپنے مالکان کے حکم پر نقد رقم کے لالچ میں اسلام آباد آئے ہیں جبکہ گھروں کو لوٹنے کی صورت میں انہیں نوکری سے برطرفی کی دھمکی دی گئی ہے۔مبصرین کاخیال ہے مظاہرین اور حکومت کے درمیان تنازع میں مایوسی کی سب سے بڑی وجہ یہ ہے کہ پوری ریاست کانظام اور قومی سطح کے مذاکرات مفلوج ہیں۔ کوئی بھی شخص یہ نہیں سوچتا کہ کچھ تبدیل ہونے جارہاہے۔بعض مبصرین کہتے ہیں کہ عمران خان اور طاہرالقادری نے اپنے حامیوں میں غصے کوبھڑکایا۔ مظاہرین کی طرف سے پولیس افسران کو ہراساں اور مارا پیٹا گیا اورامن وامان کا مسئلہ پیدا کیا گیا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مظاہرین میں اکثریت نوجوانوں کی ہے اور انہیں ریاست کی عملداری کو چیلنج کرنا سکھایا جا رہا ہے وہ پولیس سے خوفزدہ نہیں ہیں جو خطرناک امر ہے

مزید : صفحہ اول


loading...