عام انتخابات شفاف تھے ،ووٹر کی تصدیق کیلئے انگو ٹھے کا نشان ضروری نہیں،الیکشن کمیشن

عام انتخابات شفاف تھے ،ووٹر کی تصدیق کیلئے انگو ٹھے کا نشان ضروری ...

  



                اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) الیکشن کمیشن کے ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل مسعود ملک نے کہا ہے کہ عالمی مبصروں نے عام انتخابات کو مکمل شفاف قرار دیا ہے، ہمارے مطابق بھی انتخابات میں کوئی دھاندلی نہیں ہوئی، الیکشن میں کل 405عذرداریاں دائر کی گئیں تھیں اور اب ان میں سے صرف 76زیر سماعت ہیں، انتخابات کے دوران تمام امور کو قواعد و ضوابط کے مطابق حل کیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ووٹ کاسٹ کرنے کے لئے صرف قومی شناختی کارڈ کی ضرورت تھی، نادرا کی ہدایات کے مطابق مقناطیسی سیاہی بھی تیار کی گئی تھی تاہم انگوٹھا لگانا ایک فن ہے اور یہ ہر کسی کو نہیں آتا، پاکستان کی 60فیصد آبادی مزدوروں اور کسانوں پر مشتمل ہے اس لئے وہ لوگ نشان لگانے میں ناکام رہے تاہم ووٹر کی شناخت کے لئے انگوٹھے کا نشان ہو نا ضروری نہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ بیلٹ پیپرز کی تیاری کے لئے پرنٹنگ کارپوریشن آف پاکستان کی خدمات حاصل کی گئی تھیں اور بیلٹ پیپرز پر نمبرز لگانے کے لئے ۳۴ افراد کو کام دیا گیا تھا جن کی شناخت مکمل طور پر چھپائی گئی تھی تاہم ان کو اردو بازار سے بھی حاصل کیا گیا تھا۔ مسعود ملک کا کہنا تھا کہ خیبر پختونخوا حکومت کی جانب سے بائیو میٹرک ووٹنگ سسٹم پر کوئی مزید پیش رفت نہیں کی گئی

مزید : صفحہ اول


loading...