منگلا ڈیم ملک کی ترقی میں اہم کردار ادا کر رہا ہے،لیفٹیننٹ جنرل(ر) مزمل حسین

  منگلا ڈیم ملک کی ترقی میں اہم کردار ادا کر رہا ہے،لیفٹیننٹ جنرل(ر) مزمل ...

  

لاہور(پ ر)میر پور آزادکشمیر میں آنے والے حالیہ تباہ کن زلزلہ کے پیش نظر چیئرمین واپڈا لیفٹیننٹ جنرل مزمل حسین (ریٹائرڈ) نے منگلا ڈیم اور اِس کے اہم حصوں بشمول مین ڈیم، سپل وے اور پاور ہاؤس کا دورہ کیا۔دورے کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین واپڈا نے کہا کہ حالیہ زلزلہ میں منگلا ڈیم اور پاور ہاؤس کو کوئی نقصان نہیں پہنچاتاہم احتیاطی تدابیر کے پیش نظر پاور ہاؤس سے بجلی کی پیداوار بند کرنا پڑی کیو نکہ ڈیم کے ریزر وائر میں بڑی تعداد میں مٹی اور گاد کے بھر جانے سے ٹربائن کو نقصان پہنچ سکتا تھا۔ اُنہوں نے مزید کہا کہ ہم نے مختلف تنصیبات کے اعداد و شمار اکٹھے کئے ہیں اور ٹربائن کی کارکردگی جانچنے کے لئے مختلف ٹیسٹ کروائے جارہے ہیں۔ چیئرمین واپڈا نے بتایا کہ منگلا ہائیڈل پاور سٹیشن سے بجلی کی پیداوار بحال ہو چکی ہے۔اِس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین واپڈا نے کہا کہ 1967ء میں اپنی تکمیل کے بعد سے اب تک منگلا ڈیم ملک کی سماجی ترقی اور اقتصادی استحکام میں اہم کردار ادا کر تا چلا آرہا ہے، منگلا ڈیم زرعی مقاصد کے لئے پانی مہیا کرتا ہے، سیلاب کنٹرول کرنے میں مدد کرتا ہے اور قومی نظام کو سستی پن بجلی فراہم کرتا ہے۔اُنہوں نے کہا کہ منگلا ڈیم پاکستان کی تاریخ کا پہلا کثیر المقاصد میگا پراجیکٹ ہے۔

، جسے 1967ء میں مکمل کیا گیا۔ تکمیل کے وقت منگلا ریزروائر میں قابلِ استعمال پانی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت 5.88ملین ایکڑ فٹ تھی جو 2004ء تک مٹی/ گاد بھرنے کے قدرتی عمل کی وجہ سے کم ہو کر 4.6ملین ایکڑ فٹ رہ گئی تھی۔ چنانچہ واپڈا نے دریائے جہلم کے بہاؤ سے بھر پور استفادہ کرنے کیلئے 2004 ء میں منگلا ڈیم ریزنگ پراجیکٹ شروع کیا جو دسمبر2009 ء میں مکمل ہوا۔ جس کے بعد منگلا ریزروائر میں پانی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت 2.88ملین ایکڑ فٹ مزید بڑھ گئی اور یہ 4.6ملین ایکڑ فٹ سے بڑھ کر 7.4 ملین ایکڑ فٹ ہو گئی۔ یوں منگلا ڈیم میں پانی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت تربیلا ڈیم سے بھی زیادہ ہو گئی اور منگلا ڈیم،پانی ذخیرہ کرنے کے لحاظ سے پاکستان کا سب سے بڑا ڈیم بن گیا۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -