مدارس عربیہ نے ہمیشہ ملکی سالمیت کی حفاظت کی ہے‘ طاہر محمود اشرفی

  مدارس عربیہ نے ہمیشہ ملکی سالمیت کی حفاظت کی ہے‘ طاہر محمود اشرفی

  

ملتان‘خانیوال (ّ سپیشل رپورٹر‘ بیورو نیوز) پاکستان علماء کونسل پاکستان کے چیئرمین علامہ حافظ طاہر محمود اشرفی نے کہا ہے کہ جب تک ملت اسلامیہ کے ممبران ایک آواز بن کر کشمیر، فلسطین،افغانستان کے مسئلہ کو حل کرنے کیلئے نہیں سوچیں کے تب تک مسائل بڑھتے رہیں گے مدارس عر(بقیہ نمبر46صفحہ7پر)

بیہ نے ہمیشہ ملکی سالمیت اور افواج پاکستان اور ملک کے تمام اداروں کی حفاظت کی ہے حکومت وقت سے نہ مدارس کوکوئی خطرہ ہے نہ ہی ختم نبوت کے قانون کو کوئی خطرہ ہے افواہیں پھیلانے والے باز رہیں اور ملک کو انادکی کی طرف مت دھکیلیں پاکستان ہمارا وطن ہے ہم اپنے اکابرین کے جانشین ہیں نہ ان کے کردار سے بغاوت کر سکتے ہیں اور نہ ہی ان کے نقش قدم کو چھوڑ سکتے ہیں جب بھی ملک کو خون کی ضرورت پڑے گی صف اول میں یہ ہی مدارس میں قرآن وحدیث پڑھنے والے اور پڑھانے والے نظر آئیں گے ان خیالات کا اظہار انہوں نے پاکستان علماء کونسل ضلع ملتان کے زیراہتمام ملتان پریس کلب میں ”وحدت امت کانفرنس“ سے خطاب کرتے ہوئے کیا کانفرنس میں علامہ عبدالحق مجاہد، مولانا محمد شفیع قاسمی، مولانا اسعدحبیب،مولانا اسیدالرحمن، صاحبزادہ انوارالحق مجاھد،مولاناشکیل قاسمی، مولانااشفاق پتافی، مولاناعزیزاکبرقاسمی، مولانا یعقوب شیخ، مولانا عبدالمالک آصف، پروفیسر عبدالماجدوٹو، مولانااسرالحق مجاہد، مولانابلال حنیف ملتانی، مولانا خالد محمودضیاء،مولانا احمد مکی، مفتی عمران معاویہ، قاری عبدالراؤف اوردیگرخطاب کررہے ہیں۔ امت مسلمہ اور عالمی برادری کی نظریں اقوام متحدہ میں وزیر اعظم عمران خان کے خطاب پر لگی ہوئی ہیں، عالمی برادری میں مسئلہ کشمیر کی سنگینی کا اندازہ نہ کیا تو نہ صرف اس خطہ میں بلکہ پوری دنیا کا امن متاثرہ ہوگا۔وزیر اعظم عمران خان اور آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کنٹرول لائن توڑنے کا اعلان کیا تو سب سے پہلے پاکستان علماء کونسل کے کارکنان فرنٹ لائن پر ہونگے۔ان خیالات کا اظہار پاکستان علماء کونسل کے مرکزی چیئرمین علامہ طاہر محمود اشرفی نے بلدیہ ہال خانیوال میں منعقدہ کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان میں جب بھی کوئی فتنہ اٹھا تو ہم میدان میں نکلے۔ ہماری مخالفت و حمایت کی بنیاد اللہ اور اس کے رسول ہیں یہی پاکستان علماء کونسل کا منشور ہے انہوں نے کہاکہ سابقہ ادوار کے مقابلہ میں آج پاکستان میں مدارس و مساجد زیادہ محفوظ ہیں۔ انہوں نے کہاکہ عقیدت ختم میں نبوت کسی مولوی کی جاگیر نہیں ہر کلمہ پڑھنے والا عقیدت ختم نبوت کا وارث اور پاسبان ہے عقیدت ختم نبوت کے تحفظ کیلئے دس ہزار مسلمانوں نے جانوں کے نذرانے پیش کئے۔ انہوں نے وزیر اعظم عمران خان کے دورہ امریکہ کے موقع پر دین اسلام کی سہی تصویر پیش کرنے پر انہیں سلام پیش کیا اور کہاکہ انہوں نے مسئلہ کشمیر کو جس انداز میں عالمی سطح پر اجاگر کیا ہے ماضی میں اس کی کوئی مثال نہیں ملتی۔انہوں نے کہاکہ امت مسلمہ چند حکمرانوں اور لیڈروں کا نام نہیں بلکہ پوری دنیا کے مسلمان امت مسلمہ ہیں اور ایک جسم کی مانند ہے۔اسی طرح حرمین شریفین کا مسئلہ سعودی عرب کا نہیں بلکہ امت مسلمہ کا مسئلہ ہے۔انہوں نے کہاکہ حکومت ملک میں سستا انصاف فراہم کرے تو مہنگائی بد امنی لاقانیت کا خاتمہ کیا جاسکتا ہے قاتل کے انسانی حقوق ماننے والے مقتول و مظلوم کے انسانی حقوق کا بھی تحفظ یقینی بنائیں انہوں نے کہاکہ مدارس اور ساجد والے کمزور نہیں ہزاروں طلباء اور اساتذہ قیام امن کیلئے کوشاں ہیں انہوں نے کہاکہ پاکستان علماء کونسل کا نظریہ ہے کہ کفر کی آخری غلاظت قادیانیت ہے۔انہوں نے کہاکہ علماء کرام اور مدارس امن کے سفیر ہیں دہشتگردی کے خلاف جنگ میں 8 ہزار علماء نے شہادت پائی۔انہوں نے کہاکہ میری سیاست کا تقاضہ ہے کہ دین اسلام کی سربلندی کیلئے جدوجہد جاری رکھوں وفاق المدارس ہمارا ادارہ ہے اس کی تعمیر و ترقی اور حفاظت کیلئے کوشاں ہیں۔تقریب سے ضلعی صدر پاکستان علماء کونسل مفتی عمر فاروق، موالانا محمد شفیق قاسمی،ممبر پنجاب اسمبلی مس شاہدہ احمد حیات،پی ٹی آئی کے راہنما کرنل عابد محمود کھگہ،قاری سیف اللہ عابد،امتیاز علی اسد، محمد اشفاق پتافی،عبدالحق مجاہد،انوار الحق مجاہد، مفتی خالد محمود ازھر،مفتی محمد زاہد، قاری اکرام اللہ خان،مولانا افضل عباس،رانا اکرام الحق،مولانا اقبال ساجد،اجمل عباس، مولانا طارق اسماعیل، مولانا محمد حاتم، قاری آصف رحیمی، صوفی رمضان چھینہ، حکیم عامر رضا ودیگر نے علامہ طاہر محمود اشرفی کی کاوشوں کو سراہا اور اتحاد امت مسلمہ اور استحکام پاکستان کے حوالے سے اپنے مکمل تعاون کا یقین دلایا اور کہاکہ قیام امن کیلئے علماء کرام و مشائخ عظام کا بنیادی کردار ہے ہر دور میں انہوں نے آگے بڑھ کر بگاڑ پیدا کرنے والوں کا راستہ روکا۔تقریب میں علماء کرام، تاجروں، وکلاء صحافیوں، سول سوسائٹی کے نمائندوں نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔

طاہر اشرفی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -