اوورسیز پاکستانیز کمیشن ساؤتھ پنجاب کے قیام کی منظوری 

    اوورسیز پاکستانیز کمیشن ساؤتھ پنجاب کے قیام کی منظوری 

  

 لاہور(خصوصی رپورٹ)وزیراعلیٰ سردار عثمان بزدار کی زیرصدارت پنجاب اوورسیز پاکستانیز کمیشن کا اجلاس منعقدہوا،جس میں کمیشن کی کارکردگی کا تفصیلی جائزہ لیا گیا-اجلاس میں اوورسیز پاکستانیز کمیشن ساؤتھ پنجاب کے قیام کی اصولی منظوری دی گئی-وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے کہاکہ جنوبی پنجاب میں او پی سی کے قیام سے علاقے کے لوگوں کو بہت ریلیف ملے گا۔ اجلاس میں پنجاب میں قائم تمام خدمت مراکز میں او پی سی ڈیسک کھولنے کا فیصلہ کیاگیا-وزیراعلیٰ نے کہاکہ مختلف اضلاع میں قائم خدمت مراکز میں او پی سی ڈیسک کھلنے سے اووسیز پاکستانیوں کے مسائل نچلی سطح پر حل ہوں گے۔ اجلاس میں او پی سی ایکٹ 2014 میں ترامیم کی منظوری دی گئی جبکہ ایکٹ میں ترامیم کی حتمی منظوری پنجاب کابینہ دے گی- وزیر اعلیٰ نے ایڈوائزری کونسلوں کو قواعد و ضوابط کے تحت جلد تشکیل دینے کی ہدایت کرتے ہوئے کہاکہ ایڈوائزری کونسلوں میں اچھی شہرت کی حامل شخصیات کو شامل کیا جائے اورقواعد و ضوابط کے مطابق ڈسٹرکٹ کمیٹیوں میں ممبران کی تقرری کی جائے جبکہپنجاب اوورسیز پاکستانیز کمیشن کے ملازمین کو الاؤنس دینے کا معاملہ کابینہ کمیٹی برائے فنانس اینڈ ڈویلپمنٹ کو بھجوانے اورکمیشن میں خالی آسامیوں پر بھرتی کا کیس ازسر نو پیش کرنے کی ہدایت کی گئی- وزیراعلیٰ نے مزید ہدایت کی کہ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کے زیر التوا کیس جلد نمٹائے جائیں -انہوں نے کہاکہ بیرون ملک بسنے والے پاکستانی ہمارا سرمایہ ہیں -ملکی معیشت کی مضبوطی کیلئے اوورسیز پاکستانیوں کی خدمات فراموش نہیں کرسکتے -حکومت پنجاب بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کے حقوق اور املاک کا تحفظ ہر قیمت پر یقینی بنائے گی-وزیراعلیٰ کو بریفنگ کے دوران بتایا گیا کہ کمیشن اب تک 12532 شکایات کا ازالہ کر چکاہے جبکہ زیر التواء شکایات پر ضروری کارروائی کی جا رہی ہے اوراربوں روپے کی پراپرٹی واگزار کرائی گئی ہے۔ ایڈووکیٹ جنرل پنجاب،ایڈیشنل چیف سیکرٹری، انسپکٹر جنرل پنجاب، وائس چیئرمین پنجاب اوورسیز پاکستانیز کمیشن وسیم اختر، ارکان پنجاب اسمبلی عمر تنویربٹ، خیال احمد کاسترو، شاہینہ کریم، چیئرمین منصوبہ بندی و ترقیات، ایڈیشنل چیف سیکرٹری داخلہ،کمیشن کے دیگر ممبران اورمتعلقہ حکام نے اجلاس میں شرکت کی-سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو ویڈیو لنک کے ذریعے اجلاس میں شریک ہوئے-سردار عثمان بزدار گنے کے کاشتکاروں کے حقوق کے تحفظ کیلئے میدان میں آ گئے- وزیراعلیٰ عثمان بزدار کی ہدایت پرگنے کے کاشتکاروں کو 175 ارب روپے سے زائد کی ادائیگیاں یقینی بنائی گئی ہیں اور شوگر ملوں کو گنے کے کاشتکاروں کو بروقت ادائیگیاں کرنے کا پابند بنایا گیا- گزشتہ ایک ہفتے کے دوران گنے کے کاشتکاروں کو تقریباً 24 کروڑ روپے کی ادائیگی یقینی بنائی گئی- وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے کہاکہ ماضی میں گنے کا کاشتکار سڑکوں پر احتجاج کرتا رہا لیکن اسے محنت کا معاوضہ نہیں ملا۔سابق دو رمیں گنے کے کاشتکاروں کے ساتھ بے پناہ زیادتی روا رکھی گئی۔غریب کسان طاقتور مافیا کے ہاتھوں یرغمال بنا رہا۔تحریک انصاف کی حکومت نے کاشتکار کو اس کا حق واپس کیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ آئندہ سیزن میں بھی گنے کے کاشتکاروں کو ان کی محنت کا پورا ثمر دیں گے۔ سردار عثمان بزدارنے کہاہے کہ ا للہ تعالیٰ نے پاکستان کو بے شمار خوبصورت سیاحتی مقامات سے نوازا ہے۔سیاحت کوصنعت کا درجہ دے کر نئی پالیسی تشکیل دی گئی ہے۔ سیاحت کا شعبہ سماجی اور اقتصادی ترقی میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔سیاحت غیر ملکی زر مبادلہ کے حصول کا بہترین ذریعہ ہے۔ سیاحت کے فروغ سے مقامی لوگوں کو روزگار کے مواقع ملتے ہیں۔ پاکستان کے پرکشش اور قدیم تہذیبی مقامات مقامی و غیر ملکی سیاحوں کو اپنی طرف راغب کرتے ہیں۔ وزیراعلیٰ نے سیاحت کے عالمی دن پراپنے پیغام میں کہا کہ سیاحت کا شعبہ ہماری ترجیحات میں ہے۔ سیاحتی مقامات کو بہتر بنانے اور سیاحوں کیلئے سہولتوں کی فراہمی کیلئے موثر اقدامات کئے گئے ہیں۔ سیاحت کو فروغ دینے کیلئے پنجاب میں 179 ریسٹ ہاؤسز کو عوام کے لئے کھولاگیا ہے۔ 

عثمان بزدار

مزید :

صفحہ اول -