پیر کالونی سے لاش برآمد‘ مقدمہ درج نہ کرنے  پر مقتول کے ورثا کا پولیس کیخلاف مظاہرہ

 پیر کالونی سے لاش برآمد‘ مقدمہ درج نہ کرنے  پر مقتول کے ورثا کا پولیس ...

  

 ملتان (خصو صی رپورٹر) تھانہ شاہ شمس پولیس کی مبینہ ہٹ دھرمی کے باعث پیر کالونی نمبر تین میں قائم گھر سے برآمد ہونیوالی(بقیہ نمبر43صفحہ 7پر)

 نعش کے حوالے سے مقدمہ درج نہ کیا جاسکا، مقتول کا خاندان ارباب اختیار کے دروازوں پر دستک دینے لگا۔ اس ضمن میں مقتول کے بھائی شیر عرف راشد، بہنوں شازیہ، عالیہ، آسیہ، رابعہ، انعم، بیٹوں یونس رضا، نعمان رضا، فرحان رضاز بھانجے ذیشان نوید اور بہنوئی رانا محمد اشرف نے ضلع کچہری میں ملزمان اور ایس ایچ او تھانہ شاہ شمس علی گیلانی کے خلاف احتجاج کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ فرزانہ بی بی جو مقتول کی بیوی تھی اور لڑائی جھگڑا کرنا معمول تھا۔ اسی وجہ سے مقتول نے اسے طلاق بھی دی لیکن خاندان کے کہنے پر رجوع کرلیا گیا۔ فرزانہ نے اپنے آشنا عرفان کے ساتھ ملکر مقتول آصف رضا کو گلا دبا کر قتل کردیا جو گھر میں اکیلا تھا چھ روز تک نعش گھر میں موجود رہی بعد ازاں پولیس نے اپنی تحویل میں لی، فرزانہ بی بی نے اپنے آشنا ملزم عرفان ولد خدا بخش جو کہ کبیر والا ماڑی سہو کا رہائشی نے گلا دبا کر قتل کیا، مقتول کی گردن میں سوراخ اور ٹانگ ٹوٹ چکی تھی جس کا دوران غسل انکشاف ہوا تھا، نعش 21 جون کو برآمد ہوئی قتل تقریباً چھ روز قبل ہوا، پولیس نے آٹو ریکارڈنگ والے موبائل کا میموری کارڈ بھی نکال لیا تھا جس سے 14 جون صبح کے وقت کال کی گئی تھی لیکن پولیس نے اتنے ٹھوس شواہد کے باوجود مقدمہ درج نہیں کیا۔ اس حوالے سے ڈی ایس پی سرکل اظہر گیلانی نے موقف دیتے ہوئے کہا کہ ملزم اور مدعی پارٹی کے مابین جائیداد کا تنازعہ ہے۔ تفتیش جاری ہے پوسٹ مارٹم میں قتل ظاہر نہیں ہوا مزید کارروائی فرانزک رپورٹ کے بعد کی جائے گی۔

مظاہرہ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -