حور و قصور سے نہ بہشت بریں سے ہے | خاور رضوی |

حور و قصور سے نہ بہشت بریں سے ہے | خاور رضوی |
حور و قصور سے نہ بہشت بریں سے ہے | خاور رضوی |

  

حور و قصور سے نہ بہشتِ بریں سے ہے 

نازاں ہوں میں کہ میرا تعلق زمیں سے ہے 

سجدوں کی ضو نہیں ہے تو زخموں کے پھول ہیں 

باقی کوئی تو سنگ کا رشتہ جبیں سے ہے 

کیا ذکر‌ بے رخی کہ یہ شیوہ ہے حسن کا 

شکوہ مجھے تری نگۂ اولیں سے ہے 

میں تیرا بانکپن ہوں مجھے ہاتھ سے نہ کھو 

انگشتری کی زینت‌ و قیمت نگیں سے ہے 

ہم بھاگتے پھریں یہ مروت سے ہے بعید 

جب گردشِ جہاں کو عقیدت ہمیں سے ہے 

آشوبِ روزگار نے یہ حال کر دیا 

باتیں کہیں کی ہیں تو حوالہ کہیں سے ہے 

خاورؔ کسی بھی رشتے کو حاصل نہیں ثبات 

جز رشتۂ وفا جو دمِ واپسیں سے ہے 

شاعر: خاور رضوی

Hoor -o-Qusoor   Say   Na   Bahisht-e-Bareen   Say   Hay

Nazaan   Hun   Keh   Mera  Talluq   Zameen   Say   Hay

Sajdon   Ki    Zao   Nahen   Hay   To    Zakhmon   K   Phool   Hen

Baaqi   Koi    To   Sang   Ka   Rishta    Jabeen Say   Hay

Kaya    Zikr   Be   Rukhi   Keh   Yeh   Shewa   Hay   Husn   Ka

Shikwa   Mujhay    Nigah -e- Awwaleen   Say   Hay

Main   Tera   Baankpan   Hun   Mujhay   Haath   Say   Na   Kho

Ingashtari    Ki    Zeenat -o-Qeemat    Nageen    Say   Hay

Ham   Bhaagtay   Phiren   Yeh    Murawwat   Say   Hay   Baeed

Jab   Gardish -e-Jahaan   Ko    Aqeedat    Hameen   Say   Hay

Aashob -e-Rozgaar   Nay   Yeh   Haal   Kar   Diya

Baaten    Kahen    Ki   Hen   To   Hawaala   Kahen   Say   Hay

Khawar   Kisi   Bhi   Rishtay   Ko   Haasil    Nahen    Sabaat

Juzz   Rishta-e- Wafa    Jo   Dam-e-Waapseen    Say   Hay

Poet: Khawar    Rizvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -