بڑھیں گے اور بھی یوں سلسلے حجابوں کے  | خاور رضوی |

بڑھیں گے اور بھی یوں سلسلے حجابوں کے  | خاور رضوی |
بڑھیں گے اور بھی یوں سلسلے حجابوں کے  | خاور رضوی |

  

بڑھیں گے اور بھی یوں سلسلے حجابوں کے 

کر اپنی بات حوالے نہ دے کتابوں کے 

میں شہر گل کا مسافر مرے شریک سفر 

صعوبتوں کی یہ راتیں یہ دن عذابوں کے 

تری نظر سے عبارت تھے تیرے ساتھ گئے 

وہ پھول میرے خیالوں کے رنگ خوابوں کے 

ہٹایا رنگ کا پودا تو زخم زخم تھا پھول 

چمن چمن تھے وہی سلسلے سرابوں کے 

ابھی وہ حبس ہے خاورؔ کہ دم الجھتا ہے 

ابھی کھلے رکھو دروازے اپنے خوابوں کے 

شاعر: خاور رضوی

Barrhen    Gay     Aor   Bhi   Yun   Silsilay   Hijaabon   K

Kar   Apni    Baat    Hawaalay   Na   Day   Kitaabon   K

Main   Shehr-e-Gull   Ka   Musaafir   Miray   Shareek-e-Safar

Saoobton   Ki   Yeh   Raaten   Yeh   Din   Azaabon  K

Tiri   Nazar    Say   Ibaarat    Thay   Teray   Saath   Gaey

Wo   Phool    Meray    Khayaalon   K    Rang    Khaabon   K

Hataaya   Rang    Ka    Paoda   To   Zakhm   Zakhm   Tha   Phool

Chaman    Chaman    Thay   Wahi    Silsilay    Saraabon  K

Abhi   Wo   Habs    Hay   KAHWAR   Keh    Dam   Ulajhta   Hay

Abhi     Khulay    Rakho    Darwaazay    Apnay    Khaabon   K

Poet:  Khawar    Rizvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -