آنکھ میں نم تک آ پہنچا ہوں | خلیل الرحمان قمر |

آنکھ میں نم تک آ پہنچا ہوں | خلیل الرحمان قمر |
آنکھ میں نم تک آ پہنچا ہوں | خلیل الرحمان قمر |

  

آنکھ میں نم تک آ پہنچا ہوں

اُس کے غم تک آ پہنچا ہوں

پہلی بار محبت کی تھی

آخری دَم تک آ پہنچا ہوں

اس کے درد سے فیض ملا ہے

اِذنِ قلم تک آپہنچا ہوں

سانسوں میں سنگیت نہیں اب

سر سے سم تک آپہنچا ہوں

ہاتھ بڑھا کر چھونے لگا ہوں

دستِ اَلم تک آپہنچا ہوں

ملکِ عدم میں رہتے ہو    نا

راہِ عدم تک آپہنچا ہوں

اگلے قدم پر تم سے ملوں گا

اگلے قدم تک آپہنچا ہوں

شاعر: خلیل الرحمان قمر

Aankh   Men   Nam   Tak   Aa    Pahuncha   Hun

Uss   K   Gham  Tak   Aa    Pahuncha   Hun

Pehli   Baar    Muhabbat    Ki   Thi 

Aakhri    Dam   Tak   Aa    Pahuncha   Hun

Uss   K   Dard    Say   Faiz    Mila   Hay

Izn-e-Qalam  Tak   Aa    Pahuncha   Hun

Saanson    Men     Sangeet    Nahen    Ab 

Sur    Say    Sam  Tak   Aa    Pahuncha   Hun

Haath    Bartha    Kar    Chhoonay    Laga     Hun

Dast-e- Alam    Tak    Aa    Pahuncha   Hun

Muik-e-Adam    Men    Rehtay   Ho   Naa

Mulk-e- Adam   Tak     Aa    Pahuncha   Hun

Aglay    Qadam    Par    Tum   Say   Milun   Ga

Aglay   Qadam   Tak     Aa    Pahuncha   Hun

Poet: Khalilur    Rehman    Qamar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -