اشکِ ناداں سے کہو بعد میں پچھتائیں گے | خلیل الرحمان قمر |

اشکِ ناداں سے کہو بعد میں پچھتائیں گے | خلیل الرحمان قمر |
اشکِ ناداں سے کہو بعد میں پچھتائیں گے | خلیل الرحمان قمر |

  

اشکِ ناداں سے کہو بعد میں پچھتائیں گے

آپ گر کر مری آنکھوں سے کدھر جائیں گے

اپنے لفظوں کو تکلم سے گرا کر جاناں

اپنے لہجے کی تھکاوٹ میں بکھر جائیں گے

اِک ترا گھر تھا مری حدِ مسافت لیکن

اب یہ سوچا ہے کہ ہم حد سے گزر جائیں گے

اپنے افکار جلا ڈالیں گے کاغذ کاغذ

سوچ مر جائے گی تو ہم آپ بھی مر جائیں گے

اس سے پہلے کہ جدائی کی خبر تم سے ملے

ہم نے سوچا ہے کہ ہم تم سے بچھڑ جائیں گے

شاعر: خلیل الرحمان قمر

Ashk-e-Nnadaan    Say    Kaho    Baad   Men    Pachtaaen   Gay

Aap   Gir    Kar   Miri    Aankhon   Say    Kidhar    Jaaen   Gay

 

Apnay   Lafzon    Ko   Takallum   Say    Gira     Kar   Jaana

Apnay   Lehjay   Ki    Thakaawat     Men   Bikhar    Jaaen   Gay

Ik   Tira    Ghar   Tha   Miri   Had-e-Musssafat   Lekin

Ab   Yeh   Socha   Hay   Keh    Ham   Had    Say   Guzar    Jaaen   Gay

Apnay    Afkaar    Jalaa    Daalen   Gay    Kaaghaz    Kaaghaz

Soch   Mar   Jaaey    Gi   To   Ham   Aap   Bhi   Mar    Jaaen   Gay

Iss   Pehlay    Keh    Judaai    Ki    Khabar   Tum   Say   Milay

Ham   Nay   Socha    Hay   Keh    Ham   Tum   Say   Bichharr   Jaaen   Gay

Poet: Khalilur    Rehman    Qamar

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -