اپنا ہی شکوہ اپنا گلہ ہے  | خلیل الرحمان اعظمی |

اپنا ہی شکوہ اپنا گلہ ہے  | خلیل الرحمان اعظمی |
اپنا ہی شکوہ اپنا گلہ ہے  | خلیل الرحمان اعظمی |

  

اپنا ہی شکوہ اپنا گلہ ہے 

اہل وفا کو کیا ہو گیا ہے 

ہم جیسے سرکش بھی رو  دیے ہیں 

اب کے کچھ ایسا غم آ پڑا ہے 

دل کا چمن ہے مرجھا نہ جائے 

یہ آنسوؤں سے سینچا گیا ہے 

 

یہ درد یوں بھی تھا جان لیوا 

کچھ اور بھی اب کے بڑھتا چلا ہے 

بس ایک وعدہ کم بخت وہ بھی 

مر مر کے جینا سکھلا گیا ہے 

جرمِ محبت مجھ تک ہی رہتا 

ان کا بھی دامن الجھا ہوا ہے 

اک عمر گزری ہے راہ تکتے 

جینے کی شاید یہ بھی سزا ہے 

دل سرد ہو کر ہی رہ نہ جائے 

اب کے کچھ ایسی ٹھنڈی ہوا ہے 

شاعر:  خلیل الرحمان اعظمی

 (شعری مجموعہ: آسماں اے آسماں؛سال اشاعت،2000)

Apna   Hi   Shikwa   Apna   Gila   Hay

Ehl-e-Wafa   Ko   Kaya   Ho   Gaya   Hay

Ham   Jaisay   Sarkash   Bhi   Ro   Diay   Hen

Abk   Kuchh   Aisa    Gham   Aa    Parra   Hay

Dil   Ka    Chaman   Hay    Murjhaa   Na   Jaaey

Yeh   Aansuon    Say    Saincha    Gaya   Hay

Yeh   Dard   Yun    Bhi   Tha   Jaan   Lewa

Kuch   Aor   Bhi   Ab   K   Barrhta    Chala   Hay

Bass   Aik   Waada   Kam   Bakht   Wo   Bhi

Mar   Mar   K   Jeena    Sikhlaa    Gaya   Hay

Jurm-e-Muhabbat   Mujh   Tak    Hi    Rehta

Un   Ka    Bhi    Daaman    Uljha   Hua   Hay

Ik    Umr    Guzri    Hay   Raah   Taktay 

Jeenay   Ki    Shayad     Yeh    Bhi    Sazaa   Hy

Dil    Sard   Ho   Kar   Hi     Reh    Na   Jaaey

Ab    K    Kuchh    Aisi    Thandi    Hawaa    Hay

Poet: Khalilur    Rehman    Azmi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -