مجھ کو شکستِ دل کا مزا یاد آ گیا | خمار بارہ بنکوی |

مجھ کو شکستِ دل کا مزا یاد آ گیا | خمار بارہ بنکوی |
مجھ کو شکستِ دل کا مزا یاد آ گیا | خمار بارہ بنکوی |

  

مجھ کو شکستِ دل کا مزا یاد آ     گیا 

تم کیوں اداس ہو گئے کیا یاد آ     گیا 

کہنے کو زندگی تھی بہت مختصر مگر 

کچھ یوں بسر ہوئی کہ خدا یاد آ     گیا 

واعظ سلام لے کہ چلا مے کدے کو میں 

فردوسِ گم شدہ کا پتا یاد آ     گیا 

برسے بغیر ہی جو گھٹا گھر کے کھل گئی 

اک بے وفا کا عہدِ وفا یاد آ     گیا 

یوں چونک اُٹھے وہ سن کے مرا شکوۂ فراق

جیسے انہیں بھی کوئی گلہ یاد آ گیا

مانگیں گے اب دعا کہ اسے بھول جائیں ہم 

لیکن جو وہ بوقتِ دعا یاد آ     گیا 

حیرت ہے تم کو دیکھ کے مسجد میں اے خمارؔ 

کیا بات ہو گئی جو خدا یاد آ     گیا 

شاعر: خمار بارہ بنکوی

 (شعری مجموعہ: رقصِ مے؛سال اشاعت،1981)

Mujh   Ko   Shikast-e-Dil ka   Maza   Yaad   Aa   Gaya 

Tum  Kiun   Udaas   Ho   Gaey   Kaya   Yaad   Aa   Gaya 

Kehnay   Ko   Zindagi   Thi   Bahut   Mukhtasar   Magar

Kuch   Yun   Basar   Hui   Keh   KHUDA  Yaad   Aa   Gaya 

Waaiz   Salaam   Lay   Keh   Chala   May   Kaday   Ko  Main

Fidaos-e-Gum   Shuda   Ka   Pataa   Yaad   Aa   Gaya 

Barsay   Baghair   Hi   Jo   Ghataa   Ghir   K   Khul   Gai

Ik   Bewafa   Ka   Ehd-e-Wafa   Yaad   Aa   Gaya 

Yun   Chaonk   Uthay   Wo   Sun   K   Mira   Shikwa -e-Gham

Jaisay   Unhen   Bhi   Koi   Gila   Yaad   Aa   Gaya 

Maangay   Gay   Ab   Dua   Keh   Usay   Bhool   Jjaaen   Ham

Lekin   Jo   Wo   Bawaqt-e-Dua   Yaad   Aa   Gaya 

Hairat   Hay   Tum   Ko   Dekh   K   Masjid   Men    Ay   KHUMAR

Kaya   Baat   Ho   Gai   Jo   KHUDA   Yaad   Aa   Gaya 

Poet: Khumar   Barabankavi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -