سن تو سہی جہاں میں ہے تیرا فسانہ کیا  | خواجہ حیدر علی آتش |

سن تو سہی جہاں میں ہے تیرا فسانہ کیا  | خواجہ حیدر علی آتش |
سن تو سہی جہاں میں ہے تیرا فسانہ کیا  | خواجہ حیدر علی آتش |

  

سن تو سہی جہاں میں ہے تیرا فسانہ کیا 

کہتی ہے تجھ کو خلقِ خدا غائبانہ کیا 

کیا کیا الجھتا ہے تری زلفوں کے تار سے 

بخیہ طلب ہے سینۂ صد چاک شانہ کیا 

زیرِ زمیں سے آتا ہے جو گل سو زر بکف 

قاروں نے راستے میں لٹایا خزانہ کیا 

اڑتا ہے شوقِ راحت منزل سے اسپِ عمر 

مہمیز کہتے ہیں گے کسے تازیانہ کیا 

زینہ صبا کا ڈھونڈتی ہے اپنی مشتِ خاک 

بامِ بلند یار کا ہے آستانہ کیا 

چاروں طرف سے صورتِ جاناں ہو جلوہ گر 

دل صاف ہو ترا تو ہے آئینہ خانہ کیا 

صیاد اسیرِدام رگِ گل ہے عندلیب 

دکھلا رہا ہے چھپ کے اسے دام و دانہ کیا 

طبل و علم ہی پاس ہے اپنے نہ ملک و مال 

ہم سے خلاف ہو کے کرے گا زمانہ کیا 

آتی ہے کس طرح سے مرے قبض روح کو 

دیکھوں تو موت ڈھونڈ رہی ہے بہانہ کیا 

ترچھی نگہ سے طائر دل ہو چکا شکار 

جب تیر کج پڑے تو اڑے گا نشانہ کیا 

 بیتاب ہے کمال ہمارا دلِ حزیں 

مہماں سرائے جسم کا ہوگا روانہ کیا 

یوں مدعی حسد سے نہ دے داد تو نہ دے 

آتشؔ غزل یہ تو نے کہی عاشقانہ کیا 

شاعر: خواجہ حیدر علی آتش

 (کلیاتِ آتش:سال اشاعت،1963)

Sun   To   Sahi   Jahan   Men   Hay   Tera   Fasaana    Kaya

Kehti   Hay   Tujh   Ko   Khalq-e -Khuda   Ghaaibaana   Kaya

Kay   Kaya   Ulajhta   Hay   Tiri   Zulfon   K   Taar   Say

Bakhiya   Talab   Hay   Seena-e- Sad    Chaak   Shaana   Kaya

Zer-e-Zameen   Say   Aata    Hay    Jo   Gull   Sozar   Bakaff

Qaroon   Nay   Raastay   Men   Lutaaya   Khazaana   Kaya

Urrta   Hay   Shaoq-e-Rahat -e-Manzil    Say   Asp-e-Umr

Mahmaiz   Kehtay   Hen    Kisay   Aor   Taaziyaan   Kaya

Zeena   Sabaa    Ka    Dhoondti   Hay   Apni   Musht-e-Khaak

Baam-e-Buland   Yaar    Ka   Hay   Aastaana   Kaya

Chaaron   Taraf    Say    Soorat-e-Janaan   Ho   Jalwa   Gar

Dil    Saaf    Ho   Tira   To   Hay   Aaina   Khana   Kaya

Sayyaad    Aseer-e-Daam   Rag-e-Gull   Hay    Andaleeb

Dikhla   Raha   Hay   Chhup   K   Usay   Aab-o-Daana   Kaya

Tabl-o-Elm   Na   Paas   Hay    Apnay    Na    Mulk-o-Maal

Ham   Say    Khilaaf   Ho   K   Karay   Ga    Zamaana   Kaya

Aati   Hay   Kiss    Tarah   Say   Miri   Qabz-e-Rooh    Ko

Dekhun   To    Maot   Dhoond    Rahai   Hay   Bahaana   Kaya

Tirchhi   Nigah   Say   Taair-e-Dil   Ho     Chuka   Shikaar

Jab   Teer    Kajj    Parray   Ga   Urray    Ga     Nishaana   Kaya

Betaab   Hay   Kamaal    Hamaara   Dil-e-Hazeen 

Mehmaan   Saraaey   Jism   Ka   Ho   Ga   Rawaana   Kiya

Yun   Mudai    Hasad   Say   Na    Dy   Daad    To    Na   Day

AATISH    Ghazal   Yeh   Too   Nay   Kahi    Aashqaana    Kaya

Poet: Khawaja   Haidar   Ali   Aatish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -