یار کو میں نے مجھے یار نے سونے نہ دیا| خواجہ حیدر علی آتش |

یار کو میں نے مجھے یار نے سونے نہ دیا| خواجہ حیدر علی آتش |
یار کو میں نے مجھے یار نے سونے نہ دیا| خواجہ حیدر علی آتش |

  

یار کو میں نے مجھے یار نے سونے نہ دیا

رات بھر طالعِ بیدار نے سونے نہ دیا

خاک پر سنگِ درِ یار نے سونے نہ دیا

دھوپ میں سایۂ دیوار نے سونے نہ دیا

ایک شب بلبلِ بے تاب کے جاگے نہ نصیب

پہلوئے گل میں کبھی خار نے سونے نہ دیا

جب لگی آنکھ ، کراہا یہ کہ بد خواب کیا

نیند بھر کر دلِ بیمار نے سونے نہ دیا

دردِ سرِ شام سے اس زلف کے سودے میں رہا

صبح تک مجھ کو شبِ تار نے سونے نہ دیا

رات بھر کیں دلِ بے تاب نے باتیں مجھ سے

رنج و محنت کے گرفتار نے سونے نہ دیا

سیلِ گریہ سے مرے نیند اڑی مردم کی

فکرِ بام و در و دیوار نے سونے نہ دیا

باغِ عالم میں رہیں خواب کی مشتاق آنکھیں

گرمیِ آتشِ گلزار نے سونے نہ دیا

سچ ہے غم خواریِ بیمار عذابِ جاں ہے

تا دمِ مرگ دلِ زار نے سونے نہ دیا

تکیہ تک پہلو میں اس گُل نے نہ رکھا آتش

غیر کو ساتھ کبھی یار نے سونے نہ دیا

شاعر: خواجہ حیدر علی آتش

 (کلیاتِ آتش:سال اشاعت،1963)

Raat   Ko    Main   Nay   Mujhay   Yaar   Nay      Sonay   Na   Diya

Raat   Bhar   Taal-e-Bedaar   Nay    Sonay   Na   Diya

Khaak   Par   Sang-e-Dar-e-Yaar   Nay    Sonay   Na   Diya

Dhoop   Men   Saaya-e-Dewaar   Nay    Sonay   Na   Diya

Shaam   Say   Wasl   Ki   Shab   Aakh   Na   Jhapki   Ta   Subh

Shadi-e-Daolat -e-Dedaar    Nay    Sonay   Na   Diya

Aik   Shab   Bulbul-e-Betaab   K   Jaagay   Na   Naseeb

Pehlu-e-Gull   Men   Kabhi   Khaar    Nay    Sonay   Na   Diya

Jab   Lagi   Aankh   Karaaha   Yeh   Keh   Bad     Khaab   Kiya

Neend   Bhar    Kar    Dil-e-Bemaar   Nay    Sonay   Na   Diya

Dard -e-Sar    Shaam   Say   Uss    Zulf    K    Saoday    Men   Raha

Subh    Tak    Mujh    Ko   Shab-e-Taar   Nay    Sonay   Na   Diya

Raat   Bhar    Keen    Dil-e-Betaab    Nay    Baaten    Mujh   Say

Ranj-o-Mehnat    K    Gariftaar   Nay    Sonay   Na   Diya

Sail -e-Girya    Say   Miray   Neend   Urri   Mardam   Ki

Fikr-e-Baam-o-Dar-o-Dewaar   Nay    Sonay   Na   Diya

Baagh-e-Aalam    Men    Rahen    Khaab    Ki     Mushtaaq   Aankhen

Garmi-e-Aatish-e-Gulzar   Nay    Sonay   Na   Diya

Sach    Hay    Gham    Khaari-e-Bemaar    Azab -e-Jaan   Hay

Ta    Dam-e-Marg    Dil-e- Zaar   Nay    Sonay   Na   Diya

Takiya    Tak    Pehlu    Men   Uss   Gull   Nay   Na   Rakha   AATISH

Ghair    Ko    Saath    Kabhi    Yaar   Nay    Sonay   Na   Diya

Poet: Khawaja    Haidar   Ali   Aatish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -