آگ پر رشک سے میں چاکِ گریباں لوٹا| خواجہ حیدر علی آتش |

آگ پر رشک سے میں چاکِ گریباں لوٹا| خواجہ حیدر علی آتش |
آگ پر رشک سے میں چاکِ گریباں لوٹا| خواجہ حیدر علی آتش |

  

آگ پر رشک سے میں چاکِ گریباں لوٹا

خاک پر وقتِ خرام اس کا جو داماں لوٹا

حق بجانب ہے جو موسیّ کو نہ ہو تابِ جمال

تجھ کو نادیدہ دل گبرو مسلماں لوٹا

عیدِ قرباں جو قریب آئی تو کچھ دل میں سمجھ

پاؤں پر آکے مرے حاجبِ زنداں لوٹا

مرغِ بسمل کی طرح تڑپے ہزاروں دلِ زار

ہنستے ہنستے جو کبھی وہ گل خنداں لوٹا

میں نے آتش جو کیا نالہ درِ جاناں پر

دونوں ہاتھوں سے جگر تھام کے درباں لوٹا

شاعر: خواجہ حیدر علی آ  تش

 (کلیاتِ آتش:سال اشاعت،1963)

Aag   Par    Rashk  Say   Main    Chaak -e-Grebaan   Laota

Khaak   Par    waqt-e-kharaam   Uss    Ka    Jo    Damaan    Laota

Haq    Bajaanib    Hay    Jo   Moosa   Ko   Na   Ho   Taab-e-Jamaal

Mujh   Ko    Nadeeda-e-Dil    Gabroo    Muslamaan   Laota

Eid-e-Qurbaan   Jo    Qareeb   Aai   To    Kuchh    Dil   Men   Samajh

Paaon   Par   Aa   K    Miray   Haajib-e-Zindaan   Laota

Murgh-e-Bismil   Ki    Tarah   Tarrapay    Hazaaron   Dil -e-Zaar

Hanstay   Hanstay   Jo    Kabhi   Wo   Gull-e-Khandaan   Laota

Main   Nay    AATISH   Jo    Kiya    Naala   Dar-e-Jaanaan   Par

Donon   Haathon   Say    Jigar    Thaam   K   Darbaan   Laota

Poet: Khawaja   Haidar   Ali   Aatish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -