بھارت میں زرعی قوانین کیخلاف کسان احتجاج کے 300 روز مکمل، آج ملک گیر ہڑتال

بھارت میں زرعی قوانین کیخلاف کسان احتجاج کے 300 روز مکمل، آج ملک گیر ہڑتال
بھارت میں زرعی قوانین کیخلاف کسان احتجاج کے 300 روز مکمل، آج ملک گیر ہڑتال

  

نئی دہلی (ویب ڈیسک) بھارت میں تین نئے زرعی قوانین کے خلاف 10 ماہ سے کسانوں کا مظاہرہ جاری ہے, احتجاج کے 300 دن مکمل ہونے پر آج کسانوں کی جانب سے پورے بھارت میں مکمل ہڑتال جاری ہے۔ کانگریس سمیت متعدد سیاسی جماعتوں اور تاجر وں نے ہڑتال کی حمایت کااعلان کیاہے۔

ہڑتال کی کال دینے والے جوائنٹ کسان مورچہ میں 40 کسان تنظیمیں شامل ہیں، کسانوں نے دلی اور ہریانہ کے درمیان آنے جانے والے 14 راستوں کو بلاک کر دیا ہے۔ہریانہ میں شاہ آباد کے پاس دہلی - امرتسر نیشنل ہائی وے کو کسانوں نے جام کر دیا ہے۔کسانوں کی ہڑتال کے موقع پر بھارتی پولیس کی جانب سے سخت حفاظتی اقدامات کیے گئے ہیں۔ ڈپٹی کمشنر نئی دلی کا کہنا ہے کہ مظاہرین کو  دارالحکومت میں داخل نہیں ہونے دیں گے۔

ریاست  تامل ناڈو، چھتیس گڑھ، کیرالہ، پنجاب، جھارکھنڈ اور آندھرا پردیش کی حکومتوں نے کسان ہڑتال کی حمایت کا اعلان کیا ہے۔مرکزی وزیر زراعت نریندر سنگھ تومر کا کہناہے کسان احتجاج کا راستہ چھوڑ کر بات چیت سے مسئلے کا حل نکالیں، حکومت کسانوں کے مطالبات پر غور کرنے کے لیے تیار  ہے۔

خیال رہے کہ کسانوں اور حکومت کے درمیان بات چیت کےکئی دوربےنتیجہ رہےہیں۔

مزید :

بین الاقوامی -