پشاور ،حساس اداروں کی مشترکہ کاروائی ،4ہشت گرد گرفتار ،جدید اسلحہ و بارودی مواد برآمد

پشاور ،حساس اداروں کی مشترکہ کاروائی ،4ہشت گرد گرفتار ،جدید اسلحہ و بارودی ...

 پشاور(کرائمز رپورٹر)وفاقی سول انٹیلی جنس ادارے اور انسداد دہشت گردی ڈیپارٹمنٹ کے اہلکاروں نے پشاورکے علاقہ بڈھ بیڑ فرنٹیر روڈ پر دہشت گردوں کیساتھ مقابلہ کے نتیجہ میں اسلام آباد اورپشاورجوڈیشل کمپلیکس پر خود کش حملوں میں ملوث گروہ میں شامل چار دہشتگردوں کو گرفتار کرلیاگرفتار ہونیوالے افراد کا تعلق ٹی ٹی پی خیبر ایجنسی کمانڈر نذیر آفریدی گروپ سے ہے جن کے قبضہ سے ایک بوری بارودی مواد ٗپرائما کارڈ ٗالیکٹرک ڈیٹونیٹر ٗہنڈ گرنیڈ اورجدید اسلحہ بارود بھی برآمد کرلیا گیا مقابلہ میں ایک دہشت گردزخمی جبکہ ان کے کچھ ساتھی فرارہونے میں بھی کامیاب ہوگئے۔تفصیلات کے مطابق وفاقی سول انٹیلی جنس ادارے اورسی ٹی ڈی کو اطلاعات موصول ہوررہی تھیں کہ ٹی ٹی پی خیبر ایجنسی کمانڈر نذیر آفریدی گروپ پشاوراورملک کے دیگر شہروں میں گزشتہ 6`7 سالوں سے دہشت گردی کی سنگین مقدمات میں مطلوب ہیںیہ گروپ اسلام آباد اورپشاورجوڈیشل کمپلیکس پر خود کش حملوں میں ملوث تھا جبکہ لاہور جوڈیشل کمپلیکس پر بھی حملہ کرنے کی غرض سے وہاں کی ریکی کرچکا تھا اطلاعات ملنے پر وفاقی سول انٹیلی جنس ادارے اور انسداد دہشتگردی ڈیپارٹمنٹ کے اہلکاروں نے دہشت گردوں کے خفیہ ٹھکانہ کا سراغ لگاتے ہوئے پشاورکے علاقہ بڈھ بیڑ فرنٹیئر روڈپر مکان پر چھاپہ مارا جہاں موجود دہشت گردوں نے ان پر فائرنگ کردی اس دوران جوابی فائرنگ سے ایک دہشت گرد قمر زمان عرف ملنگ کو زخمی حالت میں جبکہ اس کے دیگر ساتھیوں عبدالغفور عرف احمد ٗ بسم اللہ اورجمروز کو بھی گرفتار کرلیا گیا مقابلہ کیدوران دہشت گردوں کا ساتھی ایران شاہ بمعہ دیگر افراد فرارہونے میں کامیاب ہوگیا ملزمان کے قبضہ سے دہشت گردی کی کاروائیوں میں استعمال کیے جانیوالے دو عدد سلینڈر ٗپریشر ککر ٗ پرائما کارڈ ٗایک بوری بارودی مواد ٗتین عدد الیکٹرک ڈیٹو نیٹر ٗ دہ ہینڈ گرنیڈ بم ٗ کلاشنکوف اورسیکنڑوں کارتوس برآمد کرلیے گئے ٗگرفتار کیا جانیوالا عبدالغفور عرف احمد نذیر گروپ کا اہم کمانڈر اورپشاورجوڈیشل کمپلیکس پر خود کش حملہ کا آپریشنل کمانڈر تھا جس نے افغانستان میں جوڈیشل کمپلیکس پر حملہ کی منصوبہ بندی کی اوروہاں سے دو خود کش حملہ آوروں صدام اورابو زر کو لیکر پشاورپہنچا جہاں وہ دونوں خود کش حملہ آوروں کو سورے پل کے قریب چھوڑ کر خود واپس چلا گیا تھا گرفتار ہونیوالے دہشت گردوں کو تفتیش کیلئے خفیہ مقام پر منتقل کردیا گیا ہے جہاں ان سے مزید اہم انکشافات کی توقع ہے۔

مزید : علاقائی