وزیر اعظم کے جلسے حکومت کی بوکھلاہٹ کا ثبوت ہیں، صاحبزادہ حامد رضا

وزیر اعظم کے جلسے حکومت کی بوکھلاہٹ کا ثبوت ہیں، صاحبزادہ حامد رضا

  

لاہور(خبر نگار خصوصی) سنی اتحاد کونسل پاکستان کے چیئرمین صاحبزادہ حامد رضا نے کہا ہے کہ وزیر اعظم کے جلسے حکومت کی بوکھلاہٹ کا ثبوت ہیں۔ 2017ء انتخابات کا سال ہو گا کیونکہ حالات قبل از وقت الیکشن کی طرف جارہے ہیں۔ وزیر اعظم نے جلسوں کا اعلان کرکے انتخابی مہم شروع کردی ہے۔سپریم کورٹ نواز شریف کو منی لانڈرنگ ، ٹیکس چوری اور اثاثے چھپانے کے جرم میں برطرف کرے۔حکومت پانامہ لیکس کی تحقیقات کے معاملے میں تاخیر ی حربے استعمال کررہی ہے۔موجودہ نظام ناکام ہو چکا ہے اس لئے نیا نظام لانا ضروری ہے۔حکمرانوں نے احتساب اور انصاف کو ددفن کر دیا ہے۔نواز شریف اصغر خان کیس کا بھی مجرم ہے۔نواز حکومت ملک کو تین سالوں میں مستقل وزیر خارجہ بھی نہیں دے سکی۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کرپشن مٹاؤ ملک بچاؤ مہم کے سلسلہ میں منعقدہ علماء و مشائخ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

صاحبزادہ حامد رضا نے مزید کہا کہ پاک فوج نے بے مثال قربانیاں دیکر دہشتگردوں کو نکیل ڈال دی ہے۔حکومت تین سالوں میں ملک و عوام کیلئے کچھ نہیں کرسکی۔ حکمرانوں سے نندی پور پراجیکٹ اور اور قر ض اتارو ملک سنوارو مہم کا بھی حساب اور جواب لیا جائے۔جمہوریت کی آڑ میں لوٹ مار کرنیوالے جمہوریت کے دشمن ہیں۔ آمریت کی پیدوار نواز شریف برادران کو جمہوریت کا چمپئن بننا زیب نہیں دیتا۔ کرپشن کے مقدمات فوجی عدالتوں میں بھیجے جائیں۔ جب حکومت جلسے کرتی ہے اس کے جانے کا وقت آجاتا ہے۔چیئرمین سنی اتحاد کونسل نے کہاکہ جنرل راحیل شریف نے فوجی افسروں کو برطرف کرکے تمام سیاسی جماعتوں کے رہنماؤں کو پیغام دیا ہے کہ احتساب کے معاملے میں کسی سے کو ئی رعایت نہیں کی جائے گی۔ حکمرانوں نے ملک کو آئی سی یو میں پہنچا دیا ہے۔بھارت کیلئے نرم گوشہ رکھنے والے حکمران سیکورٹی رسک بن چکے ہیں۔ کرپشن کے خلاف اور احتساب کے حق میں آواز اٹھانے کو جمہوریت دشمنی قرار نہیں دیا جاسکتا۔

مزید :

میٹروپولیٹن 4 -