ترک حکمران جماعت نے ملکی آئین کو اسلامی بنانے کی خبروں کی تردید کر دی

ترک حکمران جماعت نے ملکی آئین کو اسلامی بنانے کی خبروں کی تردید کر دی

  

انقرہ (اے پی پی) ترکی کی حکمران پارٹی نے ایسی خبروں کی تردید کی ہے کہ وہ ملک کے سیکولر آئین کو اسلامی بنانا چاہتی ہے۔ جرمن ذرائع ابلاغ کے مطابق پارٹی کے ایک اعلیٰ اہلکار کی طرف سے یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے، جب گزشتہ روز پارلیمنٹ کے سپیکر نے کہا تھا کہ ترکی کا آئین اسلامی ہونا چاہیے۔

اس بیان پر ایسے شکوک پیدا ہو گئے تھے کہ وزیر اعظم احمد داؤد اوگلو کی سیاسی جماعت ملک کے سیکولر آئین کی جگہ مذہبی آئین متعارف کرانا چاہتی ہے۔ دوسری طرف انقرہ میں سکیورٹی فورسز نے مظاہرین کو منشتر کرنے کے لیے آنسو گیس کا استعمال کیا ہے۔ یہ مظاہرین پارلیمان کی عمارت کے باہر سیکولر آئین کے حق میں مظاہرہ کر رہے تھے۔

مزید :

عالمی منظر -