بدصورت ترین آدمی کے انتخاب کے لئے مقابلہ، ججز نے کم بدصورت آدمی کو فاتح قرار دے دیا، ہنگامہ برپاہوگیا

بدصورت ترین آدمی کے انتخاب کے لئے مقابلہ، ججز نے کم بدصورت آدمی کو فاتح قرار ...
بدصورت ترین آدمی کے انتخاب کے لئے مقابلہ، ججز نے کم بدصورت آدمی کو فاتح قرار دے دیا، ہنگامہ برپاہوگیا

  

ہرارے(مانیٹرنگ ڈیسک) مقابلہ ہائے حسن کے بارے میں تو آپ سبھی جانتے ہوں گے لیکن آپ کو یہ سن کر حیرت ہو گی کہ زمباوے میں مردوں کے درمیان بدصورتی کا بھی ایک مقابلہ ہوتا ہے، جس میں سب سے بدصورت قرار پانے والے شخص کے سر پر تاج سجایاجاتا ہے۔ رواں سال کا مقابلہ گزشتہ دنوں ہوا جس میں ججوں نے غلطی سے ایک کم بدصورت شخص کو فاتح قرار دے دیا جس پر وہاں ہنگامہ برپا ہو گیا اور بالآخر ججوں کو اپنا فیصلہ تبدیل کرنا پڑ گیا۔

ویب سائٹ independent.ie کے مطابق ججوں نے پہلے 42سالہ میسن سیری نامی ایک شخص کو فاتح قرار دیا جس کے سامنے کے کئی دانت ٹوٹے ہوئے تھے اور وہ ہنستے ہوئے انتہائی خوفناک نظر آتا تھا۔ تاہم ولیم میسوینو نامی شخص نے اس پر ہنگامہ برپا کر دیا۔ اس کے ساتھ اس کے مداح بھی مشتعل ہو گئے اور ایک ہنگامہ برپا کر دیا۔ ولیم 2012ءمیں بھی یہ ٹائٹل جیت چکا تھا اور اس کا کہنا تھا کہ ”سیری بہت ہینڈسم اور مجھ سے کہیں زیادہ خوبصورت ہے، ججوں نے میرے ساتھ ناانصافی کی ہے۔“ جب ولیم کے مداحوں کا ہنگامہ حد سے بڑھا تو جج اپنے فیصلے پر نظرثانی کرنے پر مجبور ہو گئے اور ولیم کو بدصورت ترین مرد قرار دے کر ٹائٹل اس کے نام کر دیا۔

مزید : ڈیلی بائیٹس