نفرتیں پھیلانے کی سازشیں اب کامیاب نہیں ہونگی،ایم کیو ایم دباؤ بڑھنے پر لسانیت اور سندھ تقسیم کرنے کی باتیں کرتی ہے:سعید غنی

نفرتیں پھیلانے کی سازشیں اب کامیاب نہیں ہونگی،ایم کیو ایم دباؤ بڑھنے پر ...
نفرتیں پھیلانے کی سازشیں اب کامیاب نہیں ہونگی،ایم کیو ایم دباؤ بڑھنے پر لسانیت اور سندھ تقسیم کرنے کی باتیں کرتی ہے:سعید غنی

  

کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما اور صوبائی وزیر بلدیا ت سندھ سعید غنی نے کہاہے کہ  پیپلز لیبر بیورو کی جانب سے یکم مئی کو مزدروں کے عالمی دن کی مناسبت سے قائد آباد میں داؤد چورنگی پر منعقدہ جلسے سےبلاول بھٹو زرداری خطاب کریں گے،ایم کیو ایم پر جب دباؤ بڑھتا ہے تو وہ لسانیت اور سندھ تقسیم کی باتیں کرتی ہے،متحدہ کی ناکام جلسی کے بعد یہ بات واضح ہوگئی ہے کہ کراچی میں ہمیشہ عوامی مینڈیٹ چوری ہوتا رہا ہے، لوگوں میں نفرتیں پھیلانے کی سازشیں اب کامیاب نہیں ہوگی، ضمنی الیکشن میں بدترین شکست اس بات کی دلیل ہے کہ عوام انکا اصل چہر دیکھ چکے ہیں۔

بلاول ہاؤس میڈیا سیل میں ہنگامی پریس کانفرنس کرتے ہوئےسعید غنی نے کہا کہ2002 سے2018ء تک کے انتخابات میں یہ بات ثابت ہوگئی ہے کہ پیپلز پارٹی کیخلاف ہونے والی سازشوں کے باوجود ہر الیکشن میں پارٹی کا نہ صرف ووٹ بینک بڑھا ہے بلکہ ہماری اسمبلی کی نسشتوں میں بھی اضافہ ہوا ہے،ایم کیو ایم پر جب دباؤ پڑتا ہے تو وہ لسانیت اور سندھ کی تقسیم کی باتیں کرتی ہے اور عوام میں نفرت پھیلاتی ہے،اختیارات کا رونا رونے والوں کو چیلنج کرتا ہوں کہ اس وقت کے ایم سی میں ریونیو کی ریکوری صرف ڈیڑھ ارب روپے ہے وہ سندھ حکومت سے دو ارب لے اور ریونیو کی کلیکشن سندھ حکومت کو دے دیں تو تمام حقائق کھل کر سامنے آجائیں گے،کراچی کے شہریوں کو اضافی پانی کی فراہمی میں وفاقی حکومت سنجیدہ نہیں ہے اور وہ 1200 کیوسک اضافی پانی کے سندھ کے متعدد بار مطالبے کے باوجود کوئی عملی اقدامات نہیں کررہی،منتخب نمائندوں کے علاوہ ملک کے کسی ادارے کے سربراہ کے پاس عوام کو جواب دینے کا اختیار نہیں ہے کیونکہ عوام ہمیشہ منتخب نمائندوں سے ہی جواب طلبی کرتی ہے اور منتخب نمائندے ہی صرف عوام کو جوابدہ ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ پیپلز پارٹی یکم مئی کو جلسہ کر رہی ہے۔ پی پی کی روایت رہی ہے کہ وہ ہر سال مزدوروں کے عالمی دن کی مناسبت سے جلسے، جلوس، ریلیاں اور سیمینار کا انعقاد کرتی آئی ہے اور اس سال بھی کراچی لیبر بیورو کی جانب سے کیماڑی میں جلسہ کا اعلان کیا گیا تھا تاہم چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی کی جانب سے اس خواہش کا اظہار کیا گیا کہ وہ بھی اس جلسہ میں شرکت کریں گے ہم نے کیماڑی کے گرائونڈ کے چھوٹے ہونے کی وجہ سے اس کے متبادل قائد آباد میں دائود چورنگی کے مقام پر جلسہ کے انعقاد کا فیصلہ کیا ہے اور آئندہ دو روز میں اس جلسہ کے انتظامات کی تیاریاں کی جائیں گی۔ انہوں نے کہا کہ اس جلسہ سے پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری خصوصی خطاب کریں گے اور مزدروں اور کسانوں کے حوالے سے اہم اعلانات بھی کریں گے،ہمیں 100 فیصد یقین ہے کہ یہ جلسہ بھرپور طور پر کامیاب جلسہ ہوگا، جس میں صرف کراچی کے مزدور، پیپلز پارٹی کے کارکنان اور یہاں کے محنت کش حصہ لیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم کی جانب سے جو جلسہ کیا گیا تھا اس میں پورے سندھ سے لوگوں کو جمع کیا گیا لیکن وہ صرف ایک جلسی ہی رہی اور چند ہزار افراد کی شرکت نے ان کے کراچی کے مینڈیٹ کے دعویدار ہونے کا راز فاش کردیا، اسی طرح پی ٹی آئی کی جانب سے بھی سندھ بھر سے عوام کو لاکر کراچی میں جلسہ کیا جارہا ہے ، ہمارا دعوی ہے کہ یہ جلسہ بھی ناکام ہوگا کیونکہ یہ لوگ بھی کراچی کے مینڈیٹ کے اصل حقدار نہیں بلکہ انہیں تو اوپر سے لا کر بٹھایا گیا ہے۔

ایک سوال کے جواب میں سعید غنی نے کہا کہ ایم کیو ایم کے جلسہ میں جس طرح سندھ کی تقسیم اور لسانیت کو ہوا دینے کی سازش کی گئی اب یہ سازشیں کامیاب نہیں ہوگی کیونکہ عوام ان کا اصل چہرہ دیکھ چکے ہیں،ایم کیو ایم پر جب بھی دباؤ آتا ہے تو  وہ مہاجر کا نعرہ لگانا شروع کردیتی ہے اور صوبوں کی تقسیم اور لسانیت کا کارڈ کھیلنا شروع کردیتی ہے،کراچی میں انتخابی نتائج نہ2013میں حقیقی تھے اور نہ ہی2018میں حقائق پر مبنی انتخابات تھے، کراچی میں ایم کیو ایم اور تحریک انصاف کے نمائندے حقیقی نمائندے ہی نہیں ہیں۔گورنر ہاؤس میں مٹینگ کے سوال پر انہوں نے کہا کہ گورنر سندھ نے اسمبلی میں ماحول کو بہتر بنانے کے حوالے سے اجلاس کیا تھا اور اس کو حل کرنے کیلئے کمیٹیاں بنانے کی تجویز دی ہے،سیاسی مخالفت اپنی جگہ لیکن ہم اسمبلی کے ماحول کو بہتر سے بہتر طریقے سے چلانے کے خواہ ہیں اور ہم نہیں چاہتے کہ ماحول خراب رہے۔ 

مزید :

علاقائی -سندھ -کراچی -