ذخیرہ اندوزی اور لاک ڈاؤن کی خلاف ورزی پر ابتک 22ہزار مقدمات درج

ذخیرہ اندوزی اور لاک ڈاؤن کی خلاف ورزی پر ابتک 22ہزار مقدمات درج

  

 لا ہو ر (کر ائم رپو رٹر) لاک ڈاؤن کے پیش نظر پولیس ٹیموں نے 16مارچ سے صوبے بھر میں 1110ناکے لگائے ہیں جہاں اب تک 190344گاڑیوں،457342موٹر سائیکلوں اور941470شہریوں کو چیک کیا گیا ہے۔ 599104شہریوں کو وارننگ دی گئی، 40110سے سیکیورٹی بانڈزلئے گئے جبکہ دفعہ144کی خلاف ورزی پر21488 ایف آئی آرز درج کرتے ہوئے19605 شہریوں کو گرفتار کیا گیا جن میں سے23393شہری ضمانت پر رہا ہوئے جبکہ قانون کی خلاف ورزی پر3533دوکانوں اور231ریستورانوں کے خلاف کاروائی بھی عمل میں لائی گئی۔اسی طرح ذخیرہ اندوزی ایکٹ کی خلاف ورزی پر516مقدمات درج کرتے ہوئے1024قانون شکنوں کے خلاف کاروائی کی گئی جس کے نتیجے میں 498افراد گرفتار جبکہ 526ضمانت پر رہا ہوئے۔اسی طرح ذخیرہ اندوزوں سے 691150کلو گرام گندم، 337765کلو گرام چینی، 250801ماسک، 999سینٹائزر، 28طبی آلات اور 153547دیگر اشیا برآمد کی گئیں۔

16مارچ سے جاری آپریشن کے دوران230732شہریوں کو کورونا سے متعلق آگاہی جبکہ274830شہریوں کو پولیس ٹیموں نے امدادبھی فراہم کی۔گذشتہ روزبھی صوبہ بھر میں 1110 ناکے لگائے گئے جہاں 4483گاڑیوں اور11057موٹر سا ئیکلوں کو چیک کیاگیا۔پولیس ناکوں پرچیک کئے گئے 21402شہریوں میں سے13916کو وارننگ دے کر چھوڑا گیا۔ 761شہریوں سے سیکیورٹی بونڈز لئے گئے، 253ملزمان گرفتا ر ہوئے جبکہ95نے ضمانتیں کروائیں۔مجموعی طور پر179ایف آئی آر درج کی گئیں جن میں 348ملزمان کو نامزد کیا گیاجبکہ اسی دوران قانون کی خلاف ورزی پر45دوکانوں اور 2ریستورانوں کے خلاف قانونی کاروائی بھی عمل میں لائی گئی۔اسی طرح صوبے بھر میں گذشتہ 24گھنٹوں میں ذخیرہ اندوزی پر28مقدمات درج ہوئے اور29ملزمان کے خلاف قانونی کاروائی عمل میں لائی گئی جن میں سے16گرفتار جبکہ13ضمانت پر رہا ہوئے۔پولیس ٹیموں نے دوران ڈیوٹی 5156شہریوں کوکورونا سے بچاؤ کے متعلق آگاہی جبکہ 1864شہریوں کو امداد بھی فراہم کی۔ آئی جی پنجاب شعیب دستگیر نے ریجنل اور ضلعی پولیس افسران کو قانون شکنوں کے خلاف کاروائی میں تیزی لانے کی ہدایت دیتے ہوئے تاکید کی ہے کہ پولیس کاروائیوں کے حوالے سے روزانہ کی بنیاد پر رپورٹ سنٹرل پولیس آفس بھجوائی جائے۔انہوں نے مزیدکہاہے کہ فیلڈ ڈیوٹی پرتعینات افسران و اہلکار کورونا وائرس سے بچاؤ کی احتیاطی تدابیرپر عمل درآمد ہر صورت یقینی بنائیں اورپولیس ٹیمیں شہریوں کی سہولت کیلئے دیگر سرکاری اداروں کے ساتھ مل کروبائی مرض کے تدارک کیلئے ہونے والے اقدامات میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں۔

مزید :

علاقائی -