کورونا سے بڑی تعداد میں لوگوں کی ہلاکت کے شواہد نہیں ملے، مائیکل لیوٹ کا انکشاف

  کورونا سے بڑی تعداد میں لوگوں کی ہلاکت کے شواہد نہیں ملے، مائیکل لیوٹ کا ...

  

تل ابیب(مانیٹرنگ ڈیسک)جنوبی افریقی نژاد امریکی نوبل انعام یافتہ پروفیسر مائیکل لیوٹ نے کہا ہے کہ امریکا اور یورپ میں کورونا سے بڑی تعداد میں ہلاکتوں کے باوجود کہا ہے کہ اس بات کے واضح ثبوت نہیں کہ کورونا بڑی تعداد میں اموات کا سبب بن رہا ہے۔اسرائیل میں لاک ڈاؤن کے باعث پھنسے امریکی پروفیسرنے ایک بیان میں کہا کہ فلو سے ہلاکتوں کے حوالے سے بھی یہ سال اتنا برا نہیں رہا جبکہ جو لوگ کورونا سے مررہے ہیں وہ کسی نہ کسی بیماری کے باعث موت کے پہلے ہی قریب تھے، تاہم ہمیں کورونا کی وبا کے خوف پر قابو پانا ہوگا۔

کیمسٹری میں نوبل انعام حاصل کرنے والے سٹین فورڈ یونیورسٹی کے پروفیسر مائیکل لیوٹ نے اس سے قبل چین کے متعلق دعویٰ کیا تھا کہ وہ بہت جلد وباء پر قابو پالے گا اور ان کی یہ پیش گوئی تقریباً درست ثابت ہوئی۔ حال ہی میں انہوں نے کہا تھا کہ امریکا میں بھی کورونا وائرس سے نمٹنے کا ٹرننگ پوائنٹ جلدی آئے گا اور ملک میں حالات اندازوں سے جلد ہی معمول پر آجائیں گے۔مائیکل لیوٹ کا یہ بھی کہنا ہے کہ وہ ان پیشگوئیوں کی حمایت نہیں کرتے جو یہ کہتے ہیں کہ وائرس مہینے یا برسوں تک پھیلا رہ سکتاہے۔

انکشاف

مزید :

صفحہ آخر -