پنجاب کی جیلوں میں اصلاحات لانے کی ضرورت، عبدالعلیم خان

پنجاب کی جیلوں میں اصلاحات لانے کی ضرورت، عبدالعلیم خان

  

لاہور(لیڈی رپورٹر)سینئر وزیر پنجاب عبدالعلیم خان نے کہا ہے کہ پنجاب بھر کی جیلوں میں قیدیوں کی تعداد گنجائش کے مطابق لانے اور بڑے پیمانے پر اصلاحات متعارف کرانے کی ضرورت ہے،سزا بھگتنے والوں کو جیلوں میں پینے کے صاف پانی،مناسب خوراک اور ٹوائلٹ جیسی بنیادی سہولیات دینا حکومت کی اولین ذمہ داری ہے جس کے لئے ہم سب کو اسے انسانی مسئلہ سمجھتے ہوئے حل کرنا ہوگا۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے پنجاب میں جیل ریفارمز پر منعقدہ اعلیٰ سطحی اجلاس میں گفتگو کرتے ہوئے کیا جس میں ایڈیشنل چیف سیکرٹری ہوم، آئی جی جیل خانہ جات،ایڈیشنل سیکرٹری داخلہ اور ڈی آئی جی ہیڈ کو ارٹرز موجود تھے۔عبدالعلیم خان نے کہا کہ اکثر سیاسی رہنما جیل جاتے ہیں لیکن اقتدار میں آنے کے باوجود جیلوں کی بہتری کے لئے کوئی قدم نہیں اٹھایا جاتا۔ جیلوں میں نئی بیرکوں کی تعمیر کے لئے ہنگامی بنیادوں پر کام کرنا ہوگا۔عبدالعلیم خان نے بتایا کہ انہوں نے ذاتی طور پر کوٹ لکھپت جیل کے مختلف شعبوں کو بہتر بنانے کے لئے کام کیا جبکہ شیخوپورہ اور قصور کی جیلوں میں بھی پنکھے،واٹر کولرز اور دیگر سہولیات بہم پہنچائی گئی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ایک جیل کو ماڈل بنا کر باقی کو اُس معیار تک لایا جائے۔سینئر وزیر نے جلد اعلیٰ حکام کے ہمراہ کوٹ لکھپت جیل کے دورے کا بھی فیصلہ کیا تاکہ موقع پر صورتحال کا جائزہ لے کر آئندہ کے فیصلے کیے جا سکیں۔اجلا س میں ایڈیشنل چیف سیکرٹری مومن علی آغا نے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ کرونا وائر س کے پیش نظر قیدیوں کو ٹیلی فون پر عزیز و اقارب سے گفتگو کی سہولت دی جا رہی ہے۔ جیلوں میں کھانے کے معیار کو بھی بہتر بنانا گیا ہے۔انہوں نے سینئر وزیر کی ہدایات کے مطابق جیلوں میں اصلاحات لانے کے لئے ہر ممکن تعاون کا یقین دلایا جس کے لئے فوری طور پر منصوبہ بندی کا کام شروع کر دیا جائے گا۔

علیم خان

مزید :

صفحہ آخر -