لیجنڈ گلو کار مکیش کی36 ویں برسی منائی گئی

لیجنڈ گلو کار مکیش کی36 ویں برسی منائی گئی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


ممبئی( نیٹ نیوز) لیجنڈ گلوکار مکیش کو مداحوں سے بچھڑے 36 برس بیت گئے، سدا بہار گیت آج بھی کانوں میں رس گھولتے ہیں۔ مکیش کا تعلق دلی کے ایک متوسط خاندان سے تھا۔ ایک جلسے میں فلم ادا کار موتی لال نے ان کی آواز سنی اور انہیں ممبئی لے گئے جہاں انہوں نے فلم "پہلی نظر" میں مکیش سے گانا "دل جلتا ہے تو جلنے دے" ریکارڈ کروایا۔ پہلی نظر کے بعد مکیش کی آواز فلمی نگری میں چھا گئی۔ ان کی ہٹ فلموں میں "جس دیش میں گنگا بہتی ہے، سنگم، ملن، پہچان، شور، روٹی کپڑا اور مکان اور کبھی کبھی" جیسی فلمیں ہیں۔ خاص طور سے فلم "کبھی کبھی" کے گانے "میں پل دو پل کا شاعر ہوں" بہت مشہور ہوا۔ فلم "تیسری قسم" کے گانوں"سجن رے جھوٹ مت بولو، خدا کے پاس جانا ہے" بھی زبان زد عام ہوا۔ انہیں فلم فیئر کے علاوہ کئی اہم انعامات و اعزازات سے نوازا گیا۔ 27 اگست 1976 کو امریکا میں مکیش جہان فانی سے کوچ کر گئے اور یوں مکیش کی آواز کا دو دہائیوں پر محیط باب ختم ہو گیا۔

مزید :

کلچر -