سرکاری اجلاس ہوٹلوں میں بلائے جانے لگے ، خزانے پر بوجھ بڑھ گیا

سرکاری اجلاس ہوٹلوں میں بلائے جانے لگے ، خزانے پر بوجھ بڑھ گیا

لاہور( محمد نواز سنگرا)سیاسی کشیدگی اورشاہراو¿ں کی بندش کیوجہ سے دفاتر میں جانے کےلئے مشکلات۔ سرکاری میٹنگیں اور اہم اجلاس دفاتر کی بجائے مقامی ہوٹلوں میں بلائے جانے لگے جس وجہ سے اخراجات کی مد میں قومی خزانے پر بوجھ بڑھنے لگا۔فائیو سٹار ہوٹلوںمیں بلائے جانے والے اجلاسوں کا بل لاکھوں میں آتا ہے۔گزشتہ پندرہ روز کے درمیان درجن کے لگ بھگ اجلاس ہوٹلوں میں بلائے جا چکے ہیں۔عوامی تحریک اور تحریک انصاف کے دھرنوں کیوجہ سے جہاں حکومت اور سرکاری ملازمین مشکلات کا شکار ہیں وہاں دفاتر کے راستے سیل ہونے اور چند دیگر وجوہات کی بنیاد پر وزراءاور سرکاری افسران اپنے اپنے دفاتر میں اجلاس بلانے سے قاصر ہیں اور تمام تر اجلاس وفاقی اور چاروں صوبائی دارالحکومتوں کے مقامی ہوٹلوں میں بلائے جا رہے ہیں ۔جس میں وزراءاور افسران کے مکمل پرٹوکول کے ساتھ طرح طرح کے مہنگے کھانوں کیوجہ سے ایک میٹنگ کا بل لاکھوں میں آتا ہے جس کا بوجھ حکومتی خزانے پر پڑ رہا ہے اور معاشی بحران کی صورت میں سرکاری اخراجات کم کرنے کی بجائے بڑھا دیئے گئے ہیں۔

سرکاری اجلاس

مزید : صفحہ آخر