آئینی اور عوامی عدالت سے بیک وقت رجوع کرینگے ، مسلم لیگ (ن) کا فیصلہ

آئینی اور عوامی عدالت سے بیک وقت رجوع کرینگے ، مسلم لیگ (ن) کا فیصلہ

  

 اسلام آباد (خصوصی رپورٹ،مانٹیرنگ ڈیسک ) مسلم لیگ (ن) نے لاہور کے حلقہ این اے 122 اور لودھراں کے حلقہ این اے 154 میں ضمنی انتخابات لڑنے کا فیصلہ کیا ہے۔ وزیراعظم نواز شریف کی صدارت میں ایک اجلاس کے بعد وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات پرویز رشید نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ریکارڈ کی درستگی کیلئے عدالتوں سے رجوع ضرور کریں گے لیکن الیکشن ٹربیونل کے فیصلے کیخلاف حکم امتناعی نہیں لیں گے۔ مسلم لیگ (ن) نے حلقہ این اے 122 اور این اے 154 سے ضمنی انتخابات لڑنے کا فیصلہ کیا ہے۔ تحریک انصاف فرار کا راستہ اختیار نہیں کر سکتی، عمران خان میدان میں آئیں اور انتخابات لڑیں۔ ان کی جانب سے کسی حیلے بہانے کو قبول نہیں کیا جائے گا۔ دونوں حلقوں کے ضمنی انتخابات میں عمران خان کو سبق سکھائیں گے۔ پرویز رشید کا کہنا تھا کہ لاہور کے حلقہ این اے 122 سے سردار ایاز صادق اور پی پی 147 سے محسن لطیف ہی ضمنی انتخاب میں حصہ لیں گے، عمران خان اور جہانگیر ترین الیکشن لڑنے سے فرار کی کوشش کر رہے ہیں اور الیکشن کمیشن کے ارکان کا بہانہ بنا رہے ہیں۔ یہی الیکشن کمیشن خیبر پختونخوا میں بلدیاتی انتخاب کرا سکتا ہے تو دوسرے انتخاب کیوں نہیں؟ عمران خان نے عوام کے دو قیمتی سال ضائع کر دیے، اب انھیں انتخابات میں حصہ لینا پڑے گا۔ عمران خان کو اگر اپنی سچائی کا یقین ہے تو ایازصادق کے حلقے میں انتخاب لڑیں۔ اجلاس میں وفاقی وزراء خواجہ محمد آصف، سینیٹر اسحاق ڈار، عبدالقادر بلوچ،سینیٹ میں قائد ایوان راجہ ظفر الحق، عابد شیر علی ، عرفان صدیقی ، وزیراعظم کے معاون خصوصی بیرسٹر ظفر اللہ اور دیگر رہنماؤں نے شرکت کی ۔ اجلاس میں الیکشن ٹربیونلز کے فیصلوں کا تفصیلی جائزہ لیا گیا اور ان پر تحفظات کا اظہار کیا گیا، اجلاس کے بعد میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے وفاقی وزراء پرویز رشید اور احسن اقبال نے کہا کہ ضمنی انتخابات میں تحریک انصاف کو اسی طرح کی شکست ہوگی جیسے حالیہ 6 ضمنی انتخابات میں ہوچکی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اجلاس میں وزیراعظم نواز شریف نے رائے لینے کے بعد کہا کہ عوامی عدالت میں جانے سے مسلم لیگ (ن) گھبراتی نہیں ، عوام نے پہلے بھی ہم پر اعتماد کا اظہار کیا اور اب بھی اعتماد کا اظہار کریں گے۔ مسلم لیگ (ن) نعروں کی بجائے عمل پر یقین رکھتی ہے ۔ عوام کی خدمت کی ہے ، ملک میں امن وامان اور معیشت کو بہتر بنایا گیا ہے ۔ وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید نے عمران خان اور جہانگیر ترین کو سردار ایاز صادق اور صدیق بلوچ کے مقابل انتخاب لڑنے کا چیلنج دیتے ہوئے کہا کہ عمران خان اور جہانگیر ترین کو بھاگنے نہیں دیں گے، انہیں ہر صورت الیکشن لڑنا ہو گا، دونوں میدانوں میں عمران خان کو سبق سکھائیں گے، ریکارڈ کی درستگی کیلئے عدالت سے رجوع ضرور کریں گے لیکن انتخابات پر سٹے آرڈر نہیں لیں گے،خواجہ سعد رفیق ملک سے باہر ہیں، ان کی واپسی پر این اے 125کا فیصلہ کیا جائے گا۔ اجلاس میں ایم کیو ایم کے استعفوں، پنجاب میں بلدیاتی انتخابات، ملکی سیاسی امور کے حوالے سے مشاورت کی گئی۔ وزیراعظم نواز شریف کو ایم کیو ایم کے استعفوں کی واپسی کیلئے طے پانے والے نکات سے متعلق بریفنگ دی گئی، اجلاس میں مسلم لیگ(ن)نے این اے122اور 154 میں دوبارہ الیکشن لڑنے کا فیصلہ کرلیا جبکہ این اے 125 کا فیصلہ خواجہ سعد رفیق کی وطن واپسی کے بعد کیا جائے گا۔ اجلاس میں مسلم لیگ(ن) کی قیادت نے اس تجویز سے اتفاق کیا کہ عوام کی عدالت میں جائیں گے اور شفاف مینڈیٹ لے کر دوبارہ ایوان میں آیا جائے۔ پرویز رشید نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) نے فیصلہ کیا ہے کہ دو حلقوں میں عوامی عدالت میں جائیں، سردار ایاز صادق اور صدیق بلوچ کے حلقوں میں عوام کی عدالت میں جائیں گے، پاکستان مسلم لیگ(ن) ضمنی انتخاب میں کامیابیاں برقرار رکھے گی، صدیق بلوچ اور ایاز صادق کے حلقے میں تحریک انصاف کو شکست دیں گے، ہمارے امیدوار وہی ہوں گے، عمران خان اور جہانگیر ترین کو چیلنج کرتے ہیں کہ وہ ان حلقوں میں انتخابات لڑیں، دونوں میدانوں میں سبق سکھائیں گے۔ ضمنی انتخابات میں مسلم لیگ (ن) عام انتخابات کی نسبت بہت زیادہ ووٹ لے گی،2008ء کے انتخابات میں وزیراعظم نواز شریف کو انتخابات میں حصہ نہیں لینے دیا گیا، قیادت کی غیر موجودگی کے باوجود مسلم لیگ (ن) نے ایک صوبے میں حکومت بنائی،2002ء میں پرویز مشرف نے عمران خان کیلئے راستہ صاف کیا، لیکن وہ راستہ صاف ہونے کے باوجود صرف ایک نشست جیتے، عمران خان صرف انتشار پھیلاناجانتے ہیں، عوام اور انتخابات کا سامنا نہیں کر سکتے۔ سینیٹر پرویز رشید نے کہا کہ حکومت نے آپریشن ضرب عضب شروع کیا تو عمران خان نے دھرنا سیاست شروع کر دی اور قوم کے دو سال ضائع کئے، اب انہیں ان برسوں کا حساب دینا ہو گا،عمران خان اس دفعہ دھرنا دیں گے تو منہ کے بل گریں گے،وہ نوجوانوں کے مستقبل سے کھیل رہے ہیں، جب بھی ڈبے کھلتے ہیں تو ان میں سے شیر نکلتا ہے، عمران خان کسی بھی حلقے سے مسلم لیگ (ن) سے انتخاب نہیں جیت سکتے۔ انہوں نے کہا کہ ملک اقتصادی طور پر مستحکم ہو رہا ہے، انہوں نے کہا کہ اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وفاقی وزیر منصوبہ و ترقی احسن اقبال نے کہا کہ ہم صرف ایک تھرڈ امپائر کو جانتے ہیں، وہ عوام ہیں، لیکن عمران خان کے پتہ نہیں کتنے تھرڈ امپائر ہیں، دھرنے میں عمران خان کے گزشتہ 6 ضمنی انتخابات میں دھڑن تختہ کر دیا۔ انہوں نے کہا کہ پرویز رشید اچھے چھکے اور چوکے لگاتے ہیں، انہیں یہ موقع دینے پر خان صاحب کا شکرگزار ہوں، ایاز صادق نے دومرتبہ عمران خان کو شکست دی، اس دفعہ وہ الیکشن جیتنے کی ہیٹرک کریں گے، عمران خان جو مرضی کرلیں، ہم اپنے ترقیاتی ایجنڈے سے نہیں ہٹیں گے، عمران خان کے ہر دھرنے سے ہمارے کام کرنے کی رفتار میں اضافہ ہو گا۔ احسن اقبال نے کہا کہ عمران خان قوم کی خوشیوں میں خلل ڈالنا چاہتے ہیں لیکن ہم پھر بھی ملک کو امن کا گہوارہ بنانے کیلئے پرعزم ہیں، بلوچستان اور کراچی کو امن کا گہوارہ بنا کر رہیں گے،2018 ء تک بجلی کی لوڈشیڈنگ کا خاتمہ کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی نوجوانوں کا مستقبل معاشی بحالی سے جڑا ہوا ہے، عمران خان ملک کے جوانوں کے مستقبل سے کھیل رہے ہیں،وزیراعظم انتقامی کارروائی پر یقین نہیں رکھتے، ملکی ادارے بدعنوانی اور جرائم کے خلاف بلا امتیاز کارروائی کر رہے ہیں، کرپٹ عناصر کے خلاف کارروائی کا حق اداروں کے پاس ہے۔

مزید :

صفحہ اول -