دولت اور شہرت کی کمی نہیں لیکن پھر بھی یہ مشہور ماڈل بھوکی مررہی ہے کیونکہ۔۔۔

دولت اور شہرت کی کمی نہیں لیکن پھر بھی یہ مشہور ماڈل بھوکی مررہی ہے کیونکہ۔۔۔
دولت اور شہرت کی کمی نہیں لیکن پھر بھی یہ مشہور ماڈل بھوکی مررہی ہے کیونکہ۔۔۔

  

نیو یارک (نیوز ڈیسک)آج سے دو سال قبل سپر ماڈل لیزا براؤن کا شمار دنیا کی خوبصورت ترین ماڈلز میں ہوتا تھا مگر آج ان کا دلکش چہرہ کسی معمر خاتون کی طرح سکڑا ہوا نظر آتا ہے جبکہ جسم ہڈیوں کا ڈھانچہ بن کر رہ گیا ہے۔ لیزا ایک انتہائی کم پائی جانے والی بیماری SAMS کی شکار ہیں جس نے محض دو سال میں ان کے وزن میں تقریباً 25 کلوگرام کی کمی کردی ہے۔ اس بیماری کے شکار افراد کی تعداد دنیا بھر میں صرف 400 ہے اور اس کے شکار ہونے والوں میں سے ایک تہائی موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں۔

لیزا کی آنتیں پچک گئی ہیں اور وہ کوئی بھی ٹھوس غذا معدے میں نہیں رکھ پاتی۔ وہ جو بھی کھاتی ہے اسے قے ہوجاتی ہے اور اب اس کیلئے نارمل طریقے سے ٹھوس غذا کھانا ممکن ہی نہیں رہا۔ وہ کہتی ہیں کہ اس دردناک بیماری نے ان سے سب کچھ ہی چھین لیا ہے۔ ’’میں بہت شوخ و چنچل تھی اور دوستوں اور گھر والوں کے ساتھ مل کر خوب تفریح کیا کرتی تھی۔ اب میں ہر وقت درد میں مبتلاء رہتی ہوں۔ مجھے ایسے محسوس ہوتا ہے کہ جیسے دو آہنی مٹھیوں نے میری انتڑیوں کو پوری طاقت سے بھینچ رکھا ہو۔ میرے لئے آرام و سکون، خوشی اور مسکراہٹ خواب و خیال ہوکررہ گئے ہیں۔‘‘ لیزا صرف 32 سال کی ہیں مگر ان کا جسم 80 سالہ بڑھیا جیسا ہوچکا ہے اور وہ اپنے خاوند یا والدہ کی مدد کے بغیر زندگی کے معمولی سے معمولی کام بھی کرنے کے قابل نہیں رہیں۔ انہیں دیکھ کر یقین کرنا مشکل ہے کہ وہ دو سال قبل کی مشہور ماڈل لیزا براؤن ہی ہیں۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -