پاکستان مزدور کسان پارٹی کا غریب کسانوں کی بید خلیوں کے خلاف مظاہرہ

پاکستان مزدور کسان پارٹی کا غریب کسانوں کی بید خلیوں کے خلاف مظاہرہ

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


پشاور ) سٹی رپورٹر (پاکستان مزدور کسان پارٹی نے چارسدہ شمالی ہشتنگر کے کسانوں کی بے جادخلیوں،انکے کے گھروں کی مسماری اور کارکنان کی گرفتاری کے خلاف پشاور پریس کلب کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا،مظاہرین نے پلے کاڑدز اور بینرز اٹھا رکھے تھے جس پر کسانوں کے حقوق کے حوالے سے نعرے درج تھے مظاہرین نے صوبائی حکومت ، ضلعی انتظامیہ اور پولیس کے خلاف شدید نعرے بازی کی مظاہرے کی قیادت پارٹی کے مرکزی چیئرمین افضل شاہ خاموش، سیکرٹری اطلاعات شکیل وحیداللہ، مزدوریونین کے سربراہان کررہے تھے۔مظاہرین کاکہناتھا کہ پی ٹی آئی نے اپنے پچھلے دورحکومت میں ٹینینسی ایکٹ میں ترامیم کرکے کسانوں کی بے دخلی اور انکے گھرون کو مسمار کرنے کا جو کالا قانون بنایاتھا آج اسی قانون کی وجہ سے کسان اجتماعی خودکشیوں پر مجبورکیاجارہاہے حکومت نے 50لاکھ بے گھرافراد کو گھر دینے کا وعدہ کیا ہے لیکن ان کو گھر دینے کے بجائے بے دخل کیا جارہاہیں انہوں نے کہا کہ ہشتنگرکے لوگوں نے پی ٹی آئی کو ووٹ بھی دیا ہے لیکن آج ان کے سروں سے چادر لیکر سڑکوں پر لانے کی کوشش کی جارہی ہے۔انہوں نے وزیراعظم پاکستان سے مطالبہ کیاہے کہ ان کی حکومت کی جانب سے بنائے ہوئے قانون پر نظرثانی کرے اور اسے فوری طور پر ختم کیاجائے اور صوبائی حکومت بے دخلی کے خلاف اپنافیصلہ واپس لئے اور ان کے گرفتار کارکنان کے خلاف درج کرائے گئے مقدمات ختم کی جائے انہوں نے دھمکی دے دی کہ مطالبات نہ مانے کی صورت مین وہ بھوک ہڑتالی کیمپ کے ساتھ ملک بھر میں احتجاجوں کا سلسلہ جاری رہے گا۔ضلع کونسل پشاور میں اپوزیشن لیڈر اور اے این پی رہنماء سعید محمد ظاہر ایڈوکیٹ نے کہاہے کہ نئے تعلیمی سال شروع ہونے کے باوجود گورنمنٹ سکولوں میں اساتذہ کی کمی دور نہیں کی گئی ہے ، ستمبر کا مہینہ شروع ہونے والا ہے جبکہ بیشتر ہائی اور ہائی سیکنڈری سکولوں میں متھیس، کمیسٹری، فزکس اور بیالوجی کے اساتذہ نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان تحریک انصاف نے اپنے منشور میں تعلیم عام کرنے اور اساتذہ میرٹ پر بھرتی کا وعدہ کیا تھا لیکن چھ مہینے گزرنے کے باوجود اساتذہ کی بھرتی کا عمل مکمل نہیں کیا گیاہے۔ اپوزیشن لیڈر نے کہاکہ اساتذہ نہ ہونے سے طلبہ کے پڑھائی متاثر ہورہی ہے اور نومنتخب صوبائی حکومت فوری طور پر اساتذہ بھرتی کرکے طلبہ کے مستقبل سے کھیلنا بند کرے۔