مشیر کامران بنگش کی وزیر مال شکیل خان سے ملاقات

مشیر کامران بنگش کی وزیر مال شکیل خان سے ملاقات

  

پشاور(سٹاف رپورٹر) وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کے معاون خصوصی برائے سائنس وانفارمیشن ٹیکنالوجی کامران بنگش نے کہا ہے کہ خیبرپختونخوا میں لینڈریکارڈ کمپیوٹرائزیشن پر کام تیز رفتاری سے جاری ہے۔ جس میں تمام پہلوؤں کو زیرنظر رکھ کر آگے بڑھ رہے ہیں، تاکہ صدیوں پرانے سسٹم کو ڈیجیٹیلائزڈ کرکے عوام کو پٹواری مافیا سے نجات دلا دی جائے۔ اس وقت یہ کام کئی مشکل چیلنجز کو عبور کرتے ہوئے کمپیوٹرائزیشن کے عمل سے گزر رہا ہے اور بہت جلد ہم عوام کو زمینی لین دین کے حوالے سے کئی ماہ کے انتظار سے چھٹکارہ دلانے میں کامیاب ہو جائیں گے۔ ان خیالات کا انہوں نے وزیرمال خیبرپختونخوا شکیل خان سے ان کے آفس میں منگل کے روز ملاقات کے دوران کیا۔کامران بنگش نے اس موقع پر صوبائی وزیر مال کے ساتھ لینڈریکارڈ کمپیوٹرائزیشن اور اس کو شہری سہولت مرکز میں شامل کرنے کے امور پر بھی بات چیت کی۔ انہوں نے صوبائی وزیر کو آگاہ کیا کہ پشاور میں شہری سہولت مرکز کے قیام کے لئے محکمہ سائنس و انفارمیشن ٹیکنالوجی کے تحت خدمات کی بروقت فراہمی آسان بنانے کے لئے جدید ٹیکنالوجی استعمال کی جا رہی ہے، تاکہ سروسز ڈیلیوری عوام کے گھر کے دہلیزپرممکن ہو سکے۔ اس سہولت مرکز میں نہ صرف لینڈ ریکارڈ کمپیوٹرائزیشن کا عمل ہوگا بلکہ کئی دیگر اور سہولیات بھی شامل ہیں، اس سے عوام اور حکومتی مشینری کے درمیان فاصلہ کم سے کم ہوتا جائے گا، اور عوامی اعتماد میں اضافہ بھی ہوگا۔ محکمہ سائنس و انفارمیشن ٹیکنالوجی کی جانب عوامی خدمات کو سراہتے ہوئے صوبائی وزیر مال شکیل خان نے کہا، کہ لینڈ ریکارڈ کمپیوٹرائزیشن سمیت دیگر سہولیات کی ایک چھت کے نیچے دستیابی عوام کے لئے خوشخبری سے کم نہیں، اور اس منصوبے کی جتنی تعریف کی جائے کم ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ وزارت مال کی جانب سے اس ضمن میں جس قسم کی بھی ضرورت یا مدد درکار ہو، ہم مہیا کرنے کے لئے تیار ہیں، کیونکہ عوامی منصوبوں کی بروقت تکمیل پاکستان تحریک انصاف کے بنیادی اصولوں میں شامل ہے۔ اس موقع پروزیراعلیٰ کے معاون خصوصی برائے سائنس و انفارمیشن ٹیکنالوجی کامران بنگش نے کہا کہ وزیرآعظم عمران خان کے وژن کے مطابق ہم نے پہلی فرصت میں لینڈ ریکارڈ کمپیوٹرائزیشن پر کام شروع کیا اور اس کو چیلنج قبول کرتے ہوئے آگے بڑھایا۔جس سے صوبے میں پٹواری مافیا سے چھٹکارہ ممکن ہوجائے گا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -