انصاف کا قتل بڑا جرم، چیف جسٹس کے ریمارکس کو سراہتے ہیں:خرم نواز گنڈا پور 

انصاف کا قتل بڑا جرم، چیف جسٹس کے ریمارکس کو سراہتے ہیں:خرم نواز گنڈا پور 
انصاف کا قتل بڑا جرم، چیف جسٹس کے ریمارکس کو سراہتے ہیں:خرم نواز گنڈا پور 

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان عوامی تحریک کے سیکرٹری جنرل خرم نواز گنڈا پور نے کہا ہے کہ قتل کے بے گناہ ملزم کی 15سال بعد بریت پر چیف جسٹس آف پاکستان کے ریمارکس’ قتل بہت بڑا جرم ہے لیکن انصاف کا قتل اس سے بھی بڑا جرم ہے‘ کو سراہتے ہیں،ورثاء شہدائے ماڈل ٹاءون بھی انصاف کےلئے عدلیہ کی طرف دیکھ رہے ہیں، انصاف کی فراہمی میں تاخیر بھی انصاف کا قتل ہے،سانحہ ماڈل ٹاءون کے مقتولوں کے ورثاء 5 سالوں سے عدالتوں سے انصاف مانگ رہے ہیں، شہدائے ماڈل ٹاؤن کے قاتلوں کو سزائیں ملیں گی تومظلوموں کی دادرسی اورانصاف کا بول بالا ہوگا ۔

بھکر جیل میں عوامی تحریک کے 64اسیران سے ملاقات سے واپسی پر مرکزی سیکرٹریٹ ماڈل ٹاؤن میں کارکنان سے گفتگو کرتے ہوئےخرم نواز گنڈا پور نے کہا کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن کے ظلم کے خلاف احتجاج کرنے والوں کے خلاف پولیس نے جھوٹے الزامات کے تحت مقدمات درج کئے اور پھر سرگودھا اے ٹی سی نے 107 کارکنوں کو سزائیں سنا کر جیل بھجوا دیا، 14 شہدا کے ورثاء 5سال کے بعد بھی عدالتوں کی راہداریوں میں دھکے کھا رہے ہیں۔خرم نواز گنڈاپور نے اسیران کے جذبے کو سراہا اور کہا کہ ظلم کے خلاف آواز اٹھانا ہر کلمہ گو مسلمان کا فرض اولین ہے،اسیران نے مظلوموں کے لیے کلمہ حق بلند کرنے کا حق ادا کر دیا ۔ خرم نواز گنڈا پور نے کہا اسیران کو رہا کروانے کے لیے لاہور ہائی کورٹ میں اپیل دائر کر رکھی ہے جس کی سماعت 18 ستمبر کو ہو گی، امید ہے اسیران بھکر، میانوالی، خوشاب اور شیخوپورہ کو انصاف ملے گا اور شہدائے ماڈل ٹاؤن کے ورثاء کو بھی انصاف ملے گا۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -