منی لانڈرنگ کیس، سلمان، شہباز، ہارون یوسف کے ناقابل ضمانت وارنٹ جاری، اللہ اور رسول ؐ کی قسم کبھی عوام کے پیسے کو نقصان نہیں پہنچایا: شہبا ز شریف 

    منی لانڈرنگ کیس، سلمان، شہباز، ہارون یوسف کے ناقابل ضمانت وارنٹ جاری، ...

  

 لاہور(نامہ نگار)احتساب عدالت کے ایڈمن جج جوادالحسن نے سابق وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہبازشریف کے دامادہارون یوسف عزیز اور صاحبزادے سلمان شہباز کے وارنٹ گرفتاری جاری کر دیئے جبکہ نصرت شہباز،رابعہ شہباز اور جویریہ شہباز کوبھی طلبی کے نوٹس جاری کردیئے ہیں،عدالت نے ڈی جی نیب لاہورکو ملزموں کے وارنٹ گرفتاری پر عمل درآمد رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیتے ہوئے مزید سماعت سماعت 10 ستمبر تک ملتوی کردی، دوران سماعت میاں شہباز شریف نے کہا کہ ایک دھیلے کی کرپشن نہیں کی، فاضل جج نے کہا کہ قانون میں ملزم کے بہت سے حقوق ہوتے ہیں، آپ کا پوراموقف سنا جائے گا، اگر استغاثہ میں ثبوت نہ ہوئے تو آپ کے ساتھ نا انصافی نہیں کی جائے گی۔احتساب عدالت میں سابق وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف اور ان کے اہل خانہ کے خلاف منی لانڈرنگ اور آمدنی سے زائد اثاثہ جات ریفرنس کی سماعت شروع ہوئی تو قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف میاں شہباز شریف اور ان کے صاحبزادے اپوزیشن لیڈر پنجاب اسمبلی حمزہ شہباز دیگر ملزمان سمیت عدالت میں پیش ہوئے، دوران سماعت میاں شہباز شریف نے کمرہ عدالت میں کرپشن کے تمام الزامات کو جھوٹا اور بے بنیاد قرار دیا،میاں شہباز شریف نے کہا کہ فاضل جج صاحب میں نے اپنے دور میں کروڑوں روپے بچائے ہیں،قومی خزانے کو آج تک نقصان نہیں پہنچایا،ایک دھلے کی کرپشن نہیں کی خزانے سے تنخواہ نہیں لی،میں پاکستان کے اندر اربوں روپے کی سرمایہ کاری لے کر آیا ہوں،جج صاحب میں اللہ اور اس کے رسول کی قسم کھاتا ہوں کبھی عوام کے پیسے کو نقصان نہیں پہنچایا،نیب نے میرے خلاف جھوٹے مقدمے بنائے،ایک دھیلے کی ٹیلی گرافک ٹرانسفر میرے اکاؤنٹ میں نہیں،اللہ کے فضل سے نیب والے 66 دن حراست میں رکھ کر ایک دھیلے کی کرپشن ثابت نہیں کر سکے، 1997ء سے عوام کی خدمت کی اس میں ایک دھیلے کی ٹی اے ڈی اے نہیں لی،میں نے عوام کی خدمت میں اپنی تنخواہ بھی عطیہ کی ہے، فاضل جج نے کہا کہ شہباز شریف صاحب آپ بے فکر رہو قانون کے مطابق بڑے غور سے عدالت الزامات کا جائزہ لے گی،اگر الزامات جھوٹے ہوئے تو آپ اس عدالت سے باعزت بری ہوں گے جس پر میاں شہباز شریف نے کہا کہ مجھے اللہ اور آپ کی عدالت پہ یقین ہے،دوران سماعت نیب کے سپیشل پراسیکیوٹر عاصم ممتاز نے کہا کہ نیب حکام تمام کیسز میں قومی فریضہ سمجھ کر مقدمات دائر کرتے ہیں،فاضل جج نے میاں شہبازشریف کو مخاطب کرکے کہا کہ آپ کی حاضری مکمل ہوچکی ہے،آپ جا سکتے ہیں،فاضل جج نے استفسار کیا کہ کیا نصرت شہباز کے وارنٹ گرفتاری جاری ہوئے تھے، جس پر نیب کے پراسیکیوٹر نے کہا کہ نصرت شہباز کے پاس کوئی واراثتی جائیداد نہیں تھی، نصرت شہباز کے خاوند شہباز شریف کے اقتدار میں آنے کے بعد نصرت شہباز کی جائیدا میں اضافہ ہوا، نیب کے تفتیشی نے عدالت کو بتایا کہ نصرت شہباز پاکستان میں موجود نہیں،جویریہ علی کو شامل تفتیش کیا گیا؟ جس پر فاضل جج نے کہا کہ ملزمہ پر کیا الزام ہے؟ نیب کے تفتیشی نے کہا کہ جویریہ علی کو سوالات بھیجے گئے تھے مگر ملزمہ نے کوئی جواب نہیں دیا گیا، ملزم علی کے وارنٹ گرفتاری جاری ہوئے تھے مگر ان پر عمل درآمد نہیں ہوا، ملزم  کو مختلف جگہوں پر تلاش کیا گیا مگر ملزم ٹریس نہیں ہوا، اسی طرح ایک اورملزم سید محمد طاہر نقوی گرفتاری سے بچنے کے لئے بیرون ملک فرار ہے، نیب کے پراسیکیوٹر نے مزید کہا کہ نصرت اور رابعہ عمران کے بارے میں اطلاع ہے کہ دونوں بیرون ملک فرار ہیں، نیب کے تفتیشی نے کہا کہ نصرت شہباز، رابعہ عمران اور جویریہ علی کیخلاف ٹھوس شواہد موجود ہیں مگر ان کے وارنٹ گرفتاری جاری نہیں ہوئے، اس کیس میں میاں شہباز شریف،سلمان شہباز،حمزہ شہباز، رابعہ شہباز،نصرت شہباز، نثار احمد،شاہد رفیق،یاسر مشتاق،محمد مشتاق،آفتاب محمود،محمد عثمان،طاہر نقوی،قاسیم قیوم،فاضل داد عباسی اور علی احمد کو نامزد کیا گیا ہے،شہباز شریف سمیت دیگر کے خلاف  چار ملزمان وعدہ معاف گواہ بن چکے ہیں،وعدہ معاف گواہ بننے والوں میں شاہد رفیق،یاسر مشتاق،محمد مشتاق اور آفتاب محمود شامل ہیں، عدالت نے عدالتی حکم کے باوجودپیش نہ ہونے پر شہباز شریف کے داماد ہارون یوسف عزیز اور صاحبزادے سلمان شہباز کے وارنٹ گرفتاری جاری کر دیئے ہیں، عدالت میں نثار احمد، قاسم قیوم، مسرور انور، راشد کرامت سمیت دیگر گرفتار ملزموں کی حاضری مکمل کروائی،عدالت نے نصرت شہباز،رابعہ شہباز اور جویریہ شہباز کوبھی آئندہ سماعت کے لئے سمن جاری کردیاہے،گزشتہ روز سماعت کے موقع پر احتساب عدالت کے باہر سکیورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے تھے، مسلم لیگ (ن) کے کارکنوں کی کثیر احتساب عدالت میں پیشی کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے میاں شہباز شریف نے کہا کہ میاں نواز شریف کی صحت پر حکومت سیاست کررہی ہے،حکومت نے ہی میاں نواز شریف کو اجازت دے کر باہر بھیجا تھا،ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اے پی سی تمام سیاسی جماعتوں مل کر کریں گی،مہنگائی میں اضافہ ہواہے اشیاء خوروش میں قیمتی بڑھ چکی ہیں جس سے عوام پریشان ہیں۔مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف کے صاحبزادے سلیمان شہباز کا کہنا ہے عمران نیازی انتقام کی آگ میں جل رہے ہیں، لیکن ہم عوام کی عدالت میں سرخرو ہوں گے۔صدر مسلم لیگ ن شہباز شریف کے بیٹے سلیمان شہباز نے احتساب عدالت کی جانب سے اشتہاری قرار دیے جانے پر جاری اپنے بیان میں کہا ہے کہ خواتین کی عزت کے دعویدار سیاسی انتقام میں بہو، بیٹیوں کا احترام بھی بھول گئے۔انہوں نے کہا کہ سیاسی عہدہ رکھا نہ کبھی سیاست کی لیکن اس کے باوجود جھوٹے کیس میں الجھایا جا رہا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ عمران خان انتقام کی آگ میں جل رہے ہیں، خادم اعلیٰ اور ان کے خاندان کو جھوٹے ریفرنس میں ملوث کرنا عمران نیازی اور نیب گٹھ جوڑ کی بدترین مثال ہے۔سلیمان شہباز نے کہا کہ ایسے فیصلے ماضی میں منہ کے بل زمین پر گرے، ہم عوام کی عدالت میں سرخرو ہوں گے۔

منی لانڈرنگ کیس

لاہور(نامہ نگار)احتساب عدالت کے جج امجدنذیرچودھری نے سابق وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف اور حمزہ شہباز کے خلاف رمضان شوگر ملز کیس کی سماعت 10ستمبر تک ملتوی کردی، گزشتہ روز کمرہ عدالت میں حمزہ شہباز نے اپنے والد شہباز شریف سے ملاقات بھی کی،میاں شہباز شریف نے حمزہ شہباز کی خیریت دریافت کی،اس موقع پر میاں شہباز شریف نے بیٹے حمزہ شہباز کو حوصلہ دیا،کیس کی سماعت شروع ہوئی توملزموں کے وکیل اورنگزیب نے عدالت سے استدعا کی کہ سینئروکیل امجد پرویز موسم گرما کی چھٹیوں پرہیں،کیس کی سماعت ملتوی کی جائے، دوران سماعت فاضل جج نے استفسار کیا کہ حمزہ شہباز کدھر ہیں،جس پر پولیس حکام نے عدالت کو بتایا کہ حمزہ شہباز کو تھوڑی دیر تک پیش کردیا جائے گا،یادرہے کہ گزشتہ سماعت پر شہباز شریف اور حمزہ شہباز پر فرد جرم کی گئی تھی،نیب کے پراسیکیوٹر اسد اللہ ملک نے عدالت کو بتایا کہ حمزہ شہباز رمضان شوگر ملز کے سی ای او نامزد رہے،ملزم نے ایم پی اے مولانا رحمت اللہ سے درخواست دلوا کر قومی خزانے کو نقصان پہنچایا گیا، رمضان شوگر ملز کے لئے تحصیل بھوانہ کے قریب سیوریج نالہ بنوایا گیا، 2015 ء میں 36 کروڑ روپے سے مقامی آبادیوں کے نام پر رمضان شوگر ملز کے لئے نالہ تعمیر کیا گیا، حکومتی محکموں نے میاں شہباز شریف، حمزہ شہباز اور سلمان شہباز کی خوشنودی کیلئے مقامی آبادیوں کے فنڈز رمضان شوگر ملز کے لئے استعمال کئے،قانون عوامی نمائندوں کو اپنے دائرہ اختیار میں رہ کر کام کرنے کی اجازت دیتا ہے، تجاوز کی نہیں، عدالت نے شہباز شریف کو حاضری لگوانے کے بعد جانے کی اجازت دے دی،بعدازاں عدالت نے مذکورہ بالاحکم کے ساتھ کیس کی مزید سماعت آئندہ تاریخ پیشی تک ملتوی کردی۔

رمضان شوگر ملز کیس

مزید :

صفحہ اول -