فرانس بدمعاشی نہ کرے،ترکی کا بھی بحیرہ روم میں جوابی مشقوں کا اعلان

فرانس بدمعاشی نہ کرے،ترکی کا بھی بحیرہ روم میں جوابی مشقوں کا اعلان

  

انقرہ  (مانیٹرنگ ڈیسک) یونان کی جانب سے بحیرہ روم میں اتحادی ممالک کے ساتھ جاری جنگی مشقوں کے بعد ترکی نے بھی خطے میں بحری مشقوں کے انعقاد کا اعلان کر دیا۔تفصیلات کے مطابق یونان نے ایک روز قبل فرانس، اٹلی اور قبرص کیساتھ مشرقی بحیرہ روم میں فوجی مشقوں کا آغاز کیا تھا جس پر ترکی نے یونان کو خبردار کیا تھا کہ وہ ایسے اقدامات کرنے سے باز رہے جو اس کی ’بربادی‘ کا باعث بنیں۔دوسری جانب انقرہ کی جانب سے فرانس پر بھی خطے میں ’بدمعاشی‘ کرنے کا الزام لگایا ہے۔فرانس یورپین یونین کے طاقتور کیمپ میں یونان کی حمایت کی قیادت کر رہا ہے۔ فرانسیسی فریگیٹ اور لڑاکا طیارے گزشتہ روز یونانی جنگی مشقوں میں شامل ہوئے جبکہ اٹلی اور قبرص بھی ان مشقوں میں شامل ہیں۔کشیدگی میں فرانس کی مداخلت پر انقرہ پریشانی کا شکار ہے۔ خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق ترک وزیر دفاع نے پیرس کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ بدمعاشی کا دور گزر چکا ہے۔ آپ ہمیں دھونس کے ذریعے اقدامات کرنے پر مجبور نہیں کر سکتے۔انہوں نے خطے میں فرانسیسی فوج کی موجودگی کے بارے میں کہا کہ ترکی یا ترک مسلح افواج کی سرگرمیوں کو روکنے یا تبدیل کرنے کے بارے میں سوچنا خواب کے علاوہ کچھ نہیں۔ترک بحریہ کا کہنا ہے کہ بیان میں کہا گیا ہے کہ وہ بحیرہ روم میں اپنی حدود کے آخری کنارے کے پانیوں میں آئندہ منگل اور بدھ کو توپوں سے جنگی مشقیں کریں گے۔ترکی کے وزیر دفاع ہولوسی آکار نے کہا کہ یہ مشقیں سلامتی سے متعلق ہیں اور ان کا سمندر سے گیس کی تلاش کے حوالے سے براہ راست کوئی تعلق نہیں ہے۔

ترکی

مزید :

صفحہ اول -