جناح ہسپتال کے ڈاکٹر کے نوجوان بیٹے کا اندھا قتل ، سراغ لگا کر 3ملزمان گرفتار

جناح ہسپتال کے ڈاکٹر کے نوجوان بیٹے کا اندھا قتل ، سراغ لگا کر 3ملزمان گرفتار

لاہور(کرائم رپورٹر)سی آئی اے صدر پولیس نے ٹاؤن شپ کے علاقے میں جناح ہسپتال کے ڈاکٹرحامدنواز کے 17سالہ بیٹے عبداللہ کی اندھے قتل کی واردات کا سراغ لگا کر3ملزمان کو گرفتار کر لیا ہے ۔سی سی پی او کے نوٹس لینے پر ایس پی سی آئی اے نے مختلف پولیس ٹیمیں تشکیل دے کر انہیں شہر میں اندھے قتل کی وارداتوں کا سراغ لگا کر ملوث ملزمان کو گرفتار کرنے کاٹارگٹ دیا۔ڈی ایس پی سی آئی اے صدر انور سعید کنگرہ کی سربراہی میں سب انسپکٹر مظہراقبال اور دیگر اہلکاروں پر مشتمل پولیس ٹیم نے اپنی پیشہ وارانہ صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے ڈاکٹر حامد نواز کے بیٹے عبداللہ کے اندھے قتل کی واردات میں ملوث تین ملزموں فرخ سمیع عرف مون، محمد رمضان عرف خانی اور ارباز خان کو گرفتار کر لیا ہے۔ دوران تفتیش ملزموں نے بتایا کہ ملزم ارباز خاں نے 28جولائی2017کو مقتول عبداللہ کو فون کر کے ٹاؤن شپ بلایا اور ہیروئن کا انجکشن بھر کر اس کے بازو میں لگا دیا،اس کے بعد بدنام زمانہ منشیات فروش فرخ سمیع کے گھر چلے گئے اور عبداللہ کو ہیروئن SNIFFکروائی جس سے اس کی حالت بہت خراب ہو گئی اور اس کی موت واقع ہو گئی۔ 24گھنٹے بعد فجر کے وقت فرخ سمیع عرف مون اور رمضان عرف خانی نے مقتول عبداللہ کی نعش اور موٹر سائیکل ٹاؤن شپ میں 1122دفتر کے سامنے پھینک دی اور اس کے موبائل فونز اس کی جیب میں ڈال دئے تا کہ روڈ ایکسیڈنٹ ظاہر ہو اور وہاں سے فرار ہو گئے۔سی سی پی او لاہور نے اندھے قتل کی واردات کا سراغ لگاکر ملزموں کو گرفتار کرنے پر پولیس ٹیم کے لئے نقد انعامات اور تعریفی اسناد کا اعلان کیا ہے۔

مزید : علاقائی