نیب نے شریف برادران سمیت 6ریفرنس دائر کرنے ، 4انکوائریوں اور 11انویسٹی گیشن کی منظوری دیدی

نیب نے شریف برادران سمیت 6ریفرنس دائر کرنے ، 4انکوائریوں اور 11انویسٹی گیشن ...

اسلام آباد (صباح نیوز،مانیٹرنگ ڈیسک)قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کا اجلاس قومی احتساب بیورو کے چئیرمین جسٹس(ر) جاوید اقبال کی زیرصدارت نیب ہیڈکوارٹر زمیں منعقد ہوا جس میں بدعنوانی کے6ریفرنس دائرکرنے 4 انکوائریوں اور 11انویسٹی گیشنزکی باقاعدہ طور پر منظوری دی گئی ۔ جن کی تفصیل یوں ہے۔ نیب نے سابق وزیراعظم نواز شریف اور وزیراعلی پنجاب شہباز شریف اور دیگر کے خلاف ریفرنس دائر کرنے کی منظوری دی ،انہوں نے مبینہ طور پر رائیونڈ سے شریف فیملی کے گھرتک سال 2000میں غیرقانونی دورویہ سڑک تعمیر کرکے قومی خزانہ کو تقریبا ساڑھے بارہ کروڑ روپے نقصان پہنچایا۔یگزیکٹو بورڈ نے نندی پور الیکٹرک پراجیکٹ میں سابق وفاقی وزیر قانون و انصاف بابر اعوان ،سابق وزیرپانی وبجلی راجہ پرویز اشرف، سابق سیکرٹری قانون و انصاف مسعود چشتی، سابق سیکرٹری شاہدرفیع اور سابق ڈائریکٹراعجاز بشیرکے خلاف انویسٹی گیشن کی منظور ی دی ۔،ان پر مبینہ طور پر الزام ہے کہ انہوں نے نندی پور پن بجلی منصوبہ میں تاخیر کی جس سے قومی خزانے کو 113ارب روپے کا نقصان پہنچا۔ چیئرمین پاکستان تمباکو بورڈ صاحبزادہ خالدکے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائر کرنے کا فیصلہ کیا گیا ،ملزم پراختیارات کے ناجائز استعمال کرتے ہوئے غیر قانونی بھرتیاں کیں جس سے قومی خزانہ کوکروڑوں روپے کا نقصان پہنچایا۔ سابق سیکرٹری لیبرسندھ نصر حیات اور دیگر کیخلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائر کرنے کی منظور ی دی گئی ،ملزمان پر اختیارات کے ناجائز استعمال اورمہنگے داموں 200ایکڑ اراضی خریدی جس سے قومی خزانہ کو27کروڑ54لاکھ روپے سے زائد کا نقصان پہنچا۔سابق چیئرمین واپڈا طارق حمیدودیگر کیخلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائرکرنے کی منظوری دی گئی۔ملزمان پر اختیارات کے ناجائز استعمال اورپیپرا اور نیپرا رولزکی خلاف ورزی کرتے ہوئے136ملین واٹ کا رینٹل پاور پراجیکٹ کی منظوری دی جس سے قومی خزانہ کواربوں روپے کا نقصان پہنچا۔ اجلاس میں سکندر عزیز محکمہ بحالیات پشاور کے افسران اور دیگر کے خلاف انویسٹی گیشن کا فیصلہ کیا گیا ،ملزمان پر شوبہ بازارپشاور کینٹ میں سرکاری اراضی پر قبضہ اور زمینوں کی غیرقانونی منتقلی کا الزام ہے۔نواب اسلم رئیسانی و دیگر کے خلاف انویسٹی گیشن کی منظوری دی ،،ملزمان پر غیرقانونی طور پر1817ملین روپے حکومت بلوچستان سے compensation وصول کرنے کا الزام ہے جوکہ مبینہ طور پر انہوں نے اپنے رشتہ داروں میں تقسیم کی۔ سابق سیکرٹری ورکرز ویلفیئربورڈز بلوچستان ممتاز علی خان و دیگر کے خلاف انویسٹی گیشن کی منظوری دی ،ملزمان پر اختیارات کے ناجائزاستعمال ،بدعنوانی اور کڈنی سنٹر کوئٹہ کیلئے غیر معیاری طبی آلات خریدنے کا الزام ہے -سابق رکن قومی اسمبلی ملک غلام حیدر تھند،فیاض بشیرسابق کمشنر ڈی جی خان اور محکمہ ریونیو لیہ کے افسران کے خلاف انویسٹی گیشن کیمنظوری دی،ملزمان پر اختیارات کے ناجائزاستعمال اورقومی خزانہ میں خورد برد کی وجہ سے600ملین روپے نقصان پہنچانے کا الزام ہے - ایگزیکٹو بورڈ نے سابق رکن قومی اسمبلی این اے 176تحصیل کوٹ ادو ضلع مظفر گڑھ سلطان محمود ہنجرا و دیگر کے خلاف انویسٹی گیشن کی منظوری دی گئی ،ان پراختیارات کے ناجائزاستعمال کرتے ہوئیسرکاری اراضی کی غیرقانونی الاٹمنٹ کا الزام ہے-سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی اور دیگرکے خلاف انوسٹی گیشن کی منظور ی دی ۔ان پر الزام ہے کہ انہوں نے سینڈک میٹلز لیمیٹیڈکے سابق منیجنگ ڈائریکٹر محمد رازق سنجرانی اور دیگر کی تعیناتی کرتے ہوئے اختیارات سے تجاوز کیااور قومی خزانہ کو17.70ملین روپے کا نقصان پہنچایا۔ڈاکٹر ارباب عالمگیراور سابق رکن قومی اسمبلی عاصمہ ارباب کے خلاف انویسٹی گیشن کی منظوری دی ،ان پر آمدن سے زائد اثاثے بنانے کا الزام ہے ۔ سابق وائس چانسلر وفاقی اردو یونیورسٹی آف آرٹس ،سائنس اینڈ ٹیکنالوجی ڈاکٹر ظفر اقبال کے خلاف بدعنوانی کا ریفرنس دائر کرنے کی منظوری دی ،انہوں نے قومی خزانہ کو102.24ملین روپے کا نقصان پہنچایا۔جلاس میں ندیم ضیاء پیر زادہ ،شمع ندیم ،رضیہ پروین،سعدی پروین ،منیر ضیاء ،عمر ضیاء ،خالد حسین اور ساجد حسین کیخلاف انکوائری کی منظور ی دی گئی ،ملزمان پر مشتبہ رقوم کی منتقلی کا الزام ہے جوکہ مزید کارروائی کیلئے اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے نیب کو بھجوایا۔ -18 ایگزیکٹو بورڈ نے ندیم احمد کے خلاف انکوائری کی منظور ی دی ،ملزم پر مشتبہ رقوم کی منتقلی کا الزام ہے ۔

نیب

مزید : صفحہ اول