فاٹا کی طرح سرائیکی وسیب کیلئے بھی آئینی اصلاحات کی جائیں‘ پرویز شوکت مغل

فاٹا کی طرح سرائیکی وسیب کیلئے بھی آئینی اصلاحات کی جائیں‘ پرویز شوکت مغل

ملتان (پ ر)فاٹا کی طرح سرائیکی وسیب کیلئے بھی آئینی اصلاحات کی جائیں ‘ جب تک سرائیکی صوبہ نہیں بنے گا ‘ خیبر پختونخواہ میں فاٹا شمولیت کی مخالفت کرتے رہیں گے ۔ ان(بقیہ نمبر6صفحہ12پر )

خیالات کا اظہار سرائیکی رہنماؤں پروفیسر شوکت مغل ‘ میاں منصور کریم سیال ‘ مسیح اللہ خان جامپوری ‘ عابدہ بخاری ‘ظہور دھریجہ اور دیرہ اسماعیل خان سے تعلق رکھنے والے ملک خضر حیات ڈیال ‘ ملک اسلم اعوان اور ملک وسیم کھوکھر نے فاٹا اصلاحات بارے رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کیا ۔انہوں نے کہا کہ فاٹا کو خیبرپختونخواہ میں ضم کرنے کے فیصلے نے وسیب میں تشویش کی لہر دوڑا دی ہے کہ خیبر پختونخواہ کے سرائیکی اضلاع میں رہنے والے قدیم باشندوں کے حقوق پر ڈاکہ ڈال کر ان کو اقلیت میں تبدیل کیا جائے گا ۔ سوال یہ ہے کہ فاٹا کو اصلاحات کی ضرورت ہے ‘ کیا سرائیکی وسیب کے لوگوں کو اس بات کی ضرورت نہیں کہ ان کو صوبہ ملے اور ڈی جی خان میں قائم غیر اخلاقی اور غیر انسانی تمنداریاں ختم ہوں؟ انہوں نے کہا کہ انگریز سامراج نے اپنی ضرورتوں کے تحت علاقائی بندوبست کئے ‘ اس بندوبست کے تحت دیرہ اسماعیل خان کو صوبہ کے پی کے میں شامل کیا گیا اور فاٹا کو الگ حیثیت دی گئی۔ اب جب فاٹا کے مستقبل کا فیصلہ کیا جا رہا ہے تو دیرہ اسماعیل خان اور وسیب کے دوسرے اضلاع کو محروم نہ رکھا جائے اور اسے پورا حق دیا جائے ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر