سال 2017ء میں کوئی نیا کالج بن سکا نہ تعمیر ادارے فعال ہوئے

سال 2017ء میں کوئی نیا کالج بن سکا نہ تعمیر ادارے فعال ہوئے

  

ملتان(جنرل رپورٹر) سال 2017 میں کالج و ہائر ایجوکیشن کی صورتحال بھی ابتر رہی اس سال کوئی نیا کالج قائم ہو سکا نہ ہی زیر تعمیر کالجز مکمل ہو کر فعال ہو سکے۔ گورنمنٹ ایمرسن کالج(بقیہ نمبر7صفحہ12پر )

ملتان کو خود مختیاری تو دی گئی مگر اس کالج میں بورڈ آف گورنرز کا ایک بھی اجلاس نہ ہوا۔اسی طرح یو نیورسٹی آف ایجوکیشن ملتان کیمپس میں مستقل پرنسپل ہی تعینات نہ ہوا۔سال 2017 میں 10 ماہ تک ڈائریکٹر کالجز ملتان ڈویژن خالی رہی اور ڈپٹی ڈائریکٹر کالجز قائم مقام ڈائریکٹر کے طور پر کام کرتیرہے۔اسء سال ایک ہء کالج گورننمنٹ ایمرسن کالج کے تین پروفیسرز مری جاتے ہوئے چکری کے مقام پر حادثے کا شکار ہو کر خالق حقیقی سے جا ملے۔ اس سال بھی خواتین یونیورسٹی ملتان کی مستقل وائس چانسلر تعینات نہ ہو سکی اور گورنمنٹ صادق کالج یونیورسٹی بہاولپور کی وائس چانسلر کو خواتین یونیورسٹی کا اضافی چارج دیا گیا۔پنجاب پروفیسرز اینڈ لیکچررز ایسو سی ایشن کالج اساتذہ کے مطالبات کے حق میں احتجاج کرتی رہی۔اس سال سرکارء کالجز کے بیشتر اساتذہ کو سرکاری اوقات کار میں کالجز سے باہر جا کر پرائیویٹ ٹیوشنز پڑھانے سے روکا نہ جا سکا۔گورنمنٹ ایلیمنٹری کالج بوسن روڈ ملتان کو ختم کرکے اس میں قائداعظم اکیڈمی آف ایجوکیشن ڈویلپمنٹ قائم کی گء۔پہلی مرتبہ کالجز پرنسپلز کی ٹریننگ بھی کرائی گئی۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -