افسروں کی کارکردگی چیک کرنے کیلئے سسٹم تیار: حسان خاور

افسروں کی کارکردگی چیک کرنے کیلئے سسٹم تیار: حسان خاور

  

 ملتان (سٹی رپورٹر)معاون خصوصی وزیر اعلیٰ پنجاب حسان خاور نے کہا ہے کہ وزیر اعلیٰ پنجاب صوبے میں گورننس بہتر بنانے پر توجہ دے رہے ہیں۔ اس تناظر میں گڈ گورننس کو یقنینی بنانے کیلئے وزیر اعلیٰ نے شعبہ جات کی مانیٹرنگ اور افسران کی کارکرگی جانچنے کا نظام مزید موثر کر دیا ہے۔ عثمان بزدار محکموں کی کارکردگی پر مسلسل نظر رکھنے کیلئے سپیشل مانیٹرنگ یونٹ کے ذریعے (بقیہ نمبر61صفحہ6پر)

اداروں کی بہتری اور ان کے فعال کردار پر خصوصی توجہ دے رہے ہیں تاکہ عوام کے مسائل کے حل کیلئے شعبہ جات کا کردار بڑھایا جا سکے اور اس ضمن میں کوئی کوتاہی نہ ہو۔ وہ گذشتہ روز الحمرا میں میڈیا سے گفتگو کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ کی جانب سے اچھا کام نہ کرنے والے افسران کی سرزنش اور بہتر کارکردگی والوں کی حوصلہ افزائی بھی اسی کا تسلسل ہے۔ اس ضمن میں تمام اداروں کے افسران کی کارکرگی روزانہ کی بنیاد پر جانچی اور ان کی رپورٹ مرتب کی جا رہی ہے۔ حسان خاور نے بتایا سپیشل مانیٹرنگ یونٹ کے معائنے کی روشنی میں وزیر اعلیٰ پنجاب نے گذشتہ کچھ عرصہ میں غیرتسلی بخش کارکردگی کے حامل افسران کے خلاف کاروائی کی ہدایت بھی کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ نے چیف ایگزیکٹو آفیسرز لاہور پارکنگ کمپنی، پنجاب لائیو سٹاک اینڈ ڈیری ڈویلپمنٹ بورڈ، لاہور ٹرانسپورٹ کمپنی اور فیصل آباد پارکنگ کمپنی، مینیجنگ ڈائریکٹر پنجاب کھل پنچائت اتھارٹی، ڈائریکٹر جنرل ایگریکلچر مارکیٹنگ ریگولرٹی اتھارٹی، سیکرٹری پنجاب لوکل گورنمنٹ، ایم ڈی پنجاب ماس ٹرانزٹ اتھارٹی، ڈائریکٹر جنرل ڈی جی خان ڈویلپمنٹ اتھارٹی، ڈی جی بہاولپور ڈویلپمنٹ اتھارٹی، چیئرمین ہلال ڈویلپمنٹ ایجنسی اور ڈی جی پنجاب سکلز ڈویلپمنٹ اتھارٹی کی کارکردگی کو غیر تسلی بخش قرار دیتے ہوئے ان کی سرزنش کی اور پرفارمنس بہتر بنانے کی ہدایت کی ہے۔ دوسری جانب بہتر اور غیر معمولی کارکردگی دکھانے پر چیف ایگزیکٹو آفیسر انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ اتھارٹی، ڈی جی ایل ڈی اے، ڈی جی والڈ سٹی اتھارٹی، سی ای او پنجاب ماڈل بازار مینجمنٹ کمپنیپراجیکٹ ڈائریکٹر دی پنجاب سکل ڈویلپمنٹ فنڈ، چیف ایگزیکٹو آفیسر پنجاب کیٹل مارکیٹ مینجمنٹ کمپنی، چیف ایگزیکٹو آفیسر قائد اعظم سولر پاور پرائیویٹ لمیٹڈ اور دیگر محکموں کے افسران کی تعریف اور حوصلہ افزائی بھی کی گئی ہے

مزید :

ملتان صفحہ آخر -