انسانیت اور معاشرے کی بہتری کے لیے کام کرنے کی ضرورت ہے: بیرسٹر محمد علی سیف 

انسانیت اور معاشرے کی بہتری کے لیے کام کرنے کی ضرورت ہے: بیرسٹر محمد علی سیف 

  

پشاور(سٹاف رپورٹر)وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کے معاون خصوصی برائے محکمہ اطلاعات و تعلقات عامہ بیرسٹر محمد علی سیف نے کہا ہے کہ ہر ذی شعور کو اپنی ذات سے نکل کرانسانیت اور معاشرے کی بہتری کے لیے کام کرنا چاہیے۔ دین نے ہمیشہ انسان دوستی اور امن کا درس دیا۔ انتہا پسندی نے شناخت کی عدم موجودگی کی کوکھ سے جنم لیا اور یہ انسانی فطرت میں شامل ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پاک انسٹیٹیوٹ آف پیس سٹڈیز کے معاشرے، مذہب اور سیاست پر نوجوانوں کے نقطہ نظر کے موضوع پر منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع ممبران صوبائی اسمبلی، سینئر صحافی اور مختلف یونیورسٹیوں سے تعلق رکھنے والے پروفیسرز و طلبہ موجود تھے۔ اپنے خطاب میں معاون خصوصی برائے اطلاعات بیرسٹر محمد علی سیف کا کہنا تھا کہ ہمیں اپنی شعوری سطح بلند کرنے کی ضرورت ہے۔ دہشتگردی و انتہا پسندی کی جتنی بھی قسمیں ہیں وہ شناخت کی عدم موجودگی کی کوکھ سے نکلی ہیں۔ اور یہ انسانی فطرت میں شامل ہے۔ معاون خصوصی نے کہا کہ مذہب نے ہمیشہ انسان دوستی اور امن کا سبق دیا۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ دین کو اس کی روح کے مطابق سمجھا جائے۔ دینی معاشرے میں سب کو برابر حقوق حاصل ہیں۔ مذہب کا لبادہ اوڑھ کر اس کا غلط استعمال کرنے والوں کے خلاف کارروائی ہونی چاہیے۔ بیرسٹر محمد علی سیف نے کہا کہ اس ملک کی باگ ڈور نوجوانوں کو سنھبالنی ہے اور نوجوان خود میں آگے بڑھنے کا حوصلہ اور عزم پیدا کریں۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت اپنی ذات کے خول سے نکل کر معاشرے اور انسانیت کی بہتری کے لیے کام کرنے کی ضرورت ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -