خالد مقبول صدیقی نے مراد علی شاہ کی حکومت پر چڑھائی کردی ،اب تک کا سب سے بڑا الزام عائد کردیا

خالد مقبول صدیقی نے مراد علی شاہ کی حکومت پر چڑھائی کردی ،اب تک کا سب سے بڑا ...
خالد مقبول صدیقی نے مراد علی شاہ کی حکومت پر چڑھائی کردی ،اب تک کا سب سے بڑا الزام عائد کردیا
سورس: File Photo

  

کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) پاکستان کے کنوینر ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے کہا ہے کہ پیپلزپارٹی کے صوبائی وزرا میڈیا کے ذریعہ عوام کو گمراہ کر رہے ہیں کے وہ مذاکرات کیلئے تیار ہیں، پہلے وہ اس کالے بلدیاتی قانون کو ختم کریں تب مذاکرات شروع ہوں گے، شہرقائد سے 250 ارب پاکستان پیپلز پارٹی کے حکمران خاندان کو جاتا ہے،گزشتہ 14سالوں سے جعلی اکثریت کی حکومت اس شہر پر قابض ہے۔

کراچی تاجر کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ آج میں پاکستان کے سب سے وفادار حب الوطن اور ذمہ دار شہریوں کے ساتھ بیٹھا ہوں ،یہی وہ لوگ ہیں جن کے ٹیکسوں سے ملک چلتا ہے اورآج اس وطن کی حفاظت کی ضمانت اس شہر کے وفادار شہریوں کا مرہون منت ہے ، ہماری آدھی آبادی کو غائب کیا گیا جس پر ہم سپریم کورٹ گئے ،تین کروڑ کے شہر کی سیاسی نمائندگی 50 لاکھ بھی نہیں ہے، جو اعداد و شمار جو خواجہ اظہارنے ابھی پیش کئے یہ سرکاری ہیں۔

ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے مزید کہا کہ اس شہر پر ستم یہ ہے کہ ہمارا انصاف اندھا ہی نہیں بہرہ اور گونگا بھی ہے ،ہماری عدالتیں نسلہ ٹاور کو ڈیمالش کرنے پر تیار ہیں لیکن کالا قانون ڈیمالش کرنے کو تیار نہیں، اپنے حق اور سچائی کیلئے کھڑا ہونا سب سے بڑا جہاد ہے، ہم گزشتہ دس سال سے کہہ رہے ہیں کہ جب ووٹ فیصلہ نہیں کرے گا تو روڈ فیصلہ کرے گا ،ہم ہی کراچی ہیں اورہمارا اتحاد کراچی کے تمام دشمنوں پر بھاری ہے، یہاں موجود سب لوگ حقوق کے حصول کیلئے یک زبان ہیں، آپکا اتحاد اور ہمارا ساتھ کراچی کے حقوق کے لئے فیصلہ کن ہوگا، آپ کے ٹیکس سے نکاسی آب کا نظام سمیت شہر کا نظم و نسق چلتا ہے، آپ کے ٹیکس سے پولیس کو تنخواہ ملتی ہے لیکن آپکی جان و مال کا تحفظ نہیں ہوتااور بنیادی حقوق کی پامالی ہوتی ہے،ایوانوں اور عدالتوں میں ہم نے آ پکا مقدمہ رکھ دیا نتیجہ صفر ہے، لگتا ہے کہ ہماری اور آپ کی تباہی میں کوئی قومی اتفاق رائے پایا جاتا ہے، ہمارے سمیت سندھ کی تمام سیاسی جماعتوں نے اس ایکٹ کو یکسر مسترد کر دیا ہے۔

خالد مقبول نے کہا کہ پیپلز پارٹی کی صوبائی حکومت پہلے اس کالے بلدیاتی قانون کو ختم کرے، تب مذاکرات شروع ہوں گے، جب قوم متحد ہے تو کسی کے کہنے سے کوئی فرق نہیں پڑتا ،چہروں کے جمع کرنے سے اتحاد نہیں ہوتا بلکہ قوم کے جمع ہونے سے اتحاد مکمل ہوتا ہے،ہم کراچی کے تاجروں کے بعد اب صنعت کاروں سے کہتے ہیں کہ وہ ہمارا ساتھ دیں تاکہ نا انصافیوں کا ازالہ ہو سکے۔ 

مزید :

علاقائی -سندھ -کراچی -