فوج کو سیاست سے دور رہنا چاہئے، آرمی چیف کا بیان خوش آئند ہے، عوامی رد عمل

فوج کو سیاست سے دور رہنا چاہئے، آرمی چیف کا بیان خوش آئند ہے، عوامی رد عمل
فوج کو سیاست سے دور رہنا چاہئے، آرمی چیف کا بیان خوش آئند ہے، عوامی رد عمل

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لاہور(بابر بھٹی/الیکشن سیل) آرمی چیف کا بیان خوش آئندہے۔ فوج کو سیاست سے الگ رہنا چاہئے۔ فوج کی عدم مداخلت سے ملک میں ناصرف جمہوریت پروان چڑھے کی بلکہ حقیقی معنوں میں عوام کی نمائندہ جماعت سامنے آ سکے گی۔ ان خیالات کا اظہار شہریوں نے روزنامہ پاکستان کی طرف سے کئے جانے سروے میں کیا۔شہباز خالد نے بتایا کہ اگر ہماری فوج صرف نگرانی کرے تو بہت ہی اچھا ہو گا اور اس سے ملک میں جاری بدامنی اور خوف و ہراس کو کنٹرول کیا جا سکے گا۔ فوج کی موجودگی میں عوام اپنے امیدوار کو بلاخوف خطر ووٹ کاسٹ کرسکیں گے پولنگ اسٹیشن پر آ سکیں گے۔ ملک یٰسین نے کہا کہ فوج کا کام سرحدوں کی حفاظت کرنا ہے اور وہ بہت اچھے طریقے سے اپنی ڈیوٹی سر انجام دے رہی ہے۔ اگر ضرورت محسوس ہو تو فوج کو انتظامات ضرور سنبھالنے چاہئے۔محمد وارث نے بتایا کہ فوج کو کسی بھی پارٹی کی پشت پناہی کرنی بھی نہیں چاہئے۔ وہ ایک اچھا اور مضبوط ادارہ ہے اور عوام میں ابھی بھی فوج کی بہت عزت ہے اور اس کو قائم رکھنے کیلئے ان دورخ والے سیاستدانوں سے دور ہی رہنا چاہئے۔ عامر بھٹی نے کہا کہ میں آج بھی جنرل ضیاءکا دور یاد کرتا ہوں جب اس کی گیارہ سالہ حکومت میں روٹی پچاس پیسے کی تھی اور اس کے دور کے آخری دن تک رہی، ہمارے لئے فوج بہت قابل عزت ہے اور اس کو اس گند سے دور ہی رہنا چاہئے۔ محمد نواز نے بتایا کہ ہم بھی یہی چاہتے ہیں کہ فوج ان سیاسی پارٹیاں سے دور رہے اظہر اقبال ملک آصف، شاہد اقبال اور نواز احمد نے کہا کہ بہت ہی اچھا فیصلہ ہے۔

مزید : الیکشن ۲۰۱۳